ڈالر 164 کا ہوگیا،گیس 190 اور بجلی مزید 10 فیصد مہنگی

99

کراچی/اسلام آباد(اسٹاف رپورٹر+نمائندہ جسارت) انٹر بینک مارکیٹ میں ڈالر ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح 164 روپے کی ریکارڈ سطح پر پہنچ گیا ہے۔ روپے کی قدر میں مسلسل کمی رکنے کا نام نہیں لے رہی جب کہ ڈالر تیزی کے ساتھ ڈبل سنچری کی جانب گامزن ہے، آج انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر مزید 7 روپے20پیسے مہنگا ہوگیا جس کے بعد ڈالر کی قیمت 164 روپے کی نئی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔اوپن مارکیٹ میں ڈالر 6 روپے 10 پیسے مہنگا ہوکر 163 روپے کا ہوگیا ہے۔ کرنسی ڈیلرز کے مطابق ڈالر کی طلب میں غیرمعمولی اضافے کے باعث قیمت بڑھی۔اسٹیٹ بینک کا کہناہے کہ روپے کی قدر میں کمی مارکیٹ صورتحال کی عکاسی کرتی ہے ۔واضح رہے کہ رواں ماہ اب تک ڈالر 14 روپے 24 پیسے مہنگا ہوچکا ہے اور اس ملکی بیرونی قرضوں میں 1490 ارب روپے کا اضافہ ہوا ہے۔دوسری جانب بدھ کو مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ کی زیرصدارت اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا جس میں گھریلو صارفین کے لیے گیس 190فیصد تک مہنگی کرنے کی منظوری دے دی گئی۔ نئی قیمتوں کا اطلاق یکم جولائی سے ہوگا۔ اس کے علاوہ دیگر تمام کیٹیگریز کے لیے گیس کی قیمتوں میں31 فیصد سے زیادہ اضافے کی منظوری بھی دے دی گئی ہے۔ گیس کی قیمتوں میں اضافہ آئی ایم ایف کی شرائط میں شامل تھا، گیس کی قیمتوں میں اضافے سے حکومت کو 500 ارب روپے سے زیادہ ریونیو حاصل ہوگا۔ حکومت دسمبر میں گیس کی قیمتوں کا دوبارہ جائزہ لے گی۔علاوہ ازیں نیپرا نے مئی کی فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کے تحت فی یونٹ بجلی 10پیسے مہنگی کرنے کی منظوری دے دی جس سے صارفین پر ایک ارب 20کروڑ روپے کا اضافی بوجھ پڑے گا، اضافے کا اطلاق کے الیکٹرک کے صارفین پر نہیں ہوگا۔ نیپرا نے این ٹی ڈی سی اور سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی سے ہوا اور شمسی توانائی سمیت دیگر متبادل ذرائع سے حاصل پیدا کی جانے والی بجلی کی تفصیلی رپورٹ بھی طلب کر لی۔