سندھ کرپٹ ترین صوبہ ہے، سپریم کورٹ

108

سپریم کورٹ کے سینئر جج جسٹس گلزار احمد نے کہا ہے کہ سندھ کرپٹ ترین صوبہ ہے جہاں بجٹ کا ایک روپیہ بھی عوام پر خرچ نہیں ہوتا۔

سپریم کورٹ میں سکھر پریس کلب مسمار کرنے کے خلاف کیس کی سماعت ہوئی۔ جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیے کہ سندھ ہر لحاظ سے کرپٹ ترین صوبہ ہے، صوبہ سندھ کا ہر محکمہ ہر شعبہ ہی کرپٹ ہے، بدقسمتی سے سندھ میں عوام کیلئے کچھ نہیں ہے، سندھ کے بجٹ کا ایک روپیہ بھی عوام پر خرچ نہیں ہوتا، لاڑکانہ میں ایچ آئی وی کی صورتحال دیکھیں، دیکھتے دیکھتے پورا لاڑکانہ ایچ آئی وی پازیٹو ہوجائے گا۔

جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ سکھر شہر میں بجلی ہے نہ پانی، یہ گرم ترین شہر ہے لیکن عوام کثیر منزلہ عمارتوں میں رہتے ہیں، سکھر کی ایسی تیسی کردی گئی ہے، سکھر والوں کے پاس پینے کیلئے پانی ہے نہ واش روم کیلئے، میئر سکھر صاحب کثیر منزلہ عمارتیں گراتے کیوں نہیں ہیں؟ گرم شہروں میں کثیر منزلہ عمارتیں نہیں بن سکتیں،

جسٹس گلزار احمد کا کہنا تھا کہ پارکوں میں کوئی بزنس یا کاروبار نہیں چلنے دینگے، ہمیں پارک ہر صورت خالی چاہیں، کراچی میں ہم نے ایدھی اور چھیپا کی ایمبولنس بھی پارکوں سے ہٹوا دیں، پہلے کراچی سے نمٹ لیں پھر سکھر کی طرف آئیں گے،  میڈیا عوام کی خبر لگائے تو اشتہار بند ہوجاتے ہیں، صحافی بھی عوام کے مسائل کی خبریں نہیں لگاتے، عوام کو بنیادی سہولیات نہ ملیں تو وہ پرتشدد ہوجاتے ہیں۔