پریس کلبوں اور نیوز ایجنسیوں کی گرانٹ بحال 8 ویں ویج بورڈ کا اعلان

83

اسلام آباد (اے پی پی/ مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے8 ویں عبوری ویج بورڈ ایوارڈ کا اعلان کر دیا ہے‘ انہوں نے کہا ہے کہ صحافیوں کی19سال کی جدوجہد اور انتھک کوششوں کے بعد انہیں8 واں عبوری ویج بورڈ ایوارڈ ملے گا‘ تمام صحافتی تنظیموں اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مشاورت کے بعد8 ویں حتمی ویج بورڈ ایوارڈ کا اجرا کیا جائے گا ‘ وزارت اطلاعات و نشریات مستقل ویج ایوارڈ کے لیے مکمل تعاون کرے گی‘ 14 اگست کو صحافیوں، میڈیا ورکرز کی نوکریوں اور سماجی تحفظ کے ساتھ میڈیا و اشتہارات کی پالیسی کا اعلان کیا جائے گا‘ وزارت اطلاعات کی جانب سے ملک بھر کے پریس کلبز اور نیوز ایجنسیوں کی بند کی گئی گرانٹ بحال کر دی گئی ہے‘ عبوری ویج بورڈ ایوارڈ وزیراعظم عمران خان کی طرف سے نئے پاکستان میں صحافیوں اور میڈیا ورکرز کے لیے تحفہ ہے۔ وہ بدھ کو 8 ویں ویج بورڈ کے چیئرمین اور صحافتی تنظیموں کے نمائندوں کے مشاورتی اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دے رہی تھیں۔ پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹ (دستور) کے صدر حاجی محمد نواز رضا، نیشنل پریس کلب کے صدر شکیل قرار، پی ایف یو جے کے صدر افضل بٹ، پرویز شوکت، پی آر اے، آر آئی یو جے اور ایپنک کے نمائندے بھی اس موقع پر ہمراہ تھے۔ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ8 واں عبوری ویج بورڈ میں ایڈیٹر یا اسپیشل گریڈ کے ویج میں325فیصد کا اضافہ کر کے 8 ہزار 500 روپے، گریڈ ایک سے 4 تک کے ویج میں 306 فیصد اضافہ کر کے 6 ہزار 500 روپے، گریڈ 5 سے8 تک کے ویج میں 355 فیصد اضافہ کر کے5 ہزار روپے مقرر کیا ہے۔ وزیراعظم کی معاون خصوصی نے کہا کہ8 ویں عبوری ویج بورڈ ایوارڈ پر عمل درآمد کے لیے عمل درآمد کمیٹی بنائی جائے گی جو دیکھے گی کہ کس میڈیا ہائوس نے صحافیوں اور میڈیا ورکرز کو تنخواہیں نہیں دیں‘ اس میں تمام صحافتی تنظیموں کو نمائندگی دی جائے گی ۔ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ گیدڑ بھبکیاں دینے والے بجٹ کا کچھ نہیں بگاڑ سکیں گے‘ شہباز شریف نے ڈھائی گھنٹے تقریر کی جو 3 دن سے چل رہی تھی‘ جس کو کمر میں تکلیف ہو وہ ڈھائی گھنٹے قوم کو لیکچر نہیں دیتے‘ قوم کو مبارکباد کہ شہبازشریف صحت یاب ہوگئے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ عمران خان کو چور دروازوں سے آنے والے ان کے مشن سے نہیں ہٹا سکتے‘ بجٹ قومی سلامتی اور ملکی دفاع کا ضامن ہے‘ غنڈہ گردی سے نہیں آئینی طریقے سے اپوزیشن ترامیم لائے‘ قبول کریں گے جب کہ بجٹ سے ناتا توڑنا عوام سے ناتا توڑنے کے مترادف ہے۔