سابق وفاقی وزیر کا شریک ملزم ضمانت منسوخ ہونے پر گرفتار

94

کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر کامران مائیکل کے شریک ملزم سابق سیکرٹری کو آپریٹو سوسائٹی کے پی ٹی گلاب خان کی عبوری ضمانت اور گرفتار ملزم محمد اسماعیل کی ضمانت منسوخ کردی جس کے بعد نیب نے گلاب خان کو عدالت سے گرفتار کرلیا ۔نیب کاالزام تھا کہ کے پی ٹی کوآپریٹیو ہائوسنگ سوسائٹی میں انتہائی کم قیمت پر غیر قانونی طور پر16 پلاٹس الاٹ کیے گئے ،کامران مائیکل نے 3 کمرشل پلاٹس کی الاٹمنٹ پر 11 کروڑ روپے رشوت لی۔ دوسرے کیس میں سابق وزیر اعلیٰ قائم علی شاہ کیخلاف ملیر میں 94 ایکڑزمین کے الاٹمنٹ کیس میں عدالت عالیہ نے ڈی جی نیب کو رپورٹ پیش کرنے کے لیے 2 ہفتے کی آخری مہلت دے دی۔نیب کا کہنا تھا کہ قائم علی شاہ نے مہران سوسائٹی اور گلف بلڈر کو غیر قانونی طور پر 94 ایکڑزمین الاٹ کی،قائم علی شاہ کے وکیل کا کہنا تھا کہ الاٹمنٹ منسوخ کر دی تھی اب زمین سندھ حکومت کے پاس ہے۔ علاوہ ازیںسندھ ہائیکورٹ نے محکمہ اطلاعات سندھ میں آٹو میشن کے نام پر کروڑوں روپے کرپشن ریفرنس پر نیا بینچ مقرر کرنے کیلیے معاملہ چیف جسٹس کو بھیج دیا ،عدالت عالیہ میں سابق سیکرٹری انفارمیشن ذوالفقار علی شلوانی کی درخواست ضمانت کی سماعت ہوئی ،جبکہ نیب پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ ریفرنس کا تفتیشی افسر اسلام باد میں ہے سماعت ملتوی کی جائے ، جس پر عدالت نے آئندہ سماعت پر تفتیشی افسر کو حاضری یقینی بنانے کا حکم دیا۔ ملزم کے وکیل کا کہناتھا کہ میرا موکل ڈیڑھ سال سے جیل میں ہے،ریفرنس کے 9 گواہ کے بیان قلمبند کیے گئے ہے، 8 ماہ سے درخواست زیر سماعت ہے اور ہر بار نیب حکام مہلت طلب کرتے ہیں ، نیب کا کہنا تھا کہ ریفرنس میں عطاء محمد اور نور محمد لغاری ضمانت پر ہیں ،ملزم ذوالفقار شلوانی اور منصور احمد راجپوت جیل میں ہیں۔