حیدر آباد شہر سے بسوں اور کوچوں کے اڈے ختم کرنا قابل مذمت ہے

59

حیدر آباد (اسٹاف رپورٹر) پاکستان مسلم لیگ (ن) کی مرکزی کونسل کے رکن اور حیدرآباد ڈویژن کے سیکرٹری اطاعات جمال عارف سہروردی نے حیدرآباد میں بسوں اور کوچوں کے اڈے ختم کرنے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ شہریوں کو پریشانی کے علاوہ دور دراز اسٹاپ تک جانے کے لیے 300 سے 800 روپے مزید کرایہ دینا پڑے گا جو کہ غریب عوام کے لیے سراسر ناانصافی اور زیادتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حیدر آباد کے یم این اے اور ایم پی اے کہاں ہیں؟ جو کہ عوام کے ووٹوں سے منتخب ہوئے ہیں۔ انہیں حیدر آباد میں ٹرانسپورٹ کا گمبھیر مسئلہ نظر نہیں آرہا ہے۔ حیدرآبا د کے شہریوں کو سرکاری سطح پر تفریحی سہولیات بالکل میسر نہیں ہیں، ریلوے کا خدا حافظ ہے، جو سب کو پتا ہے۔ بیشتر مسافر ٹرینیں اندروں سندھ کے بجائے اندورن ملک کو ترجیح دیتے ہیں، اندرون سندھ سفر کرنے کے لیے مسافر عام چھوٹی گاڑیوں کو ترجیح دیتے ہیں۔ سٹی اور لطیف آباد سے کراچی اور دیگر شہروں کو آنے جانے والی گاڑیاں شہریوں کو سہولیات فراہم کرتی ہیں جو کہ اب عوام کے لیے سہولیات ختم کردی گئی ہیں۔ سہولیات کے خاتمے سے شہریوں کے تفریح اخراجات کئی گنا بڑ جائیں گے۔ جمال عارف سہروردی نے ضلعی انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ انٹر سٹی ٹرانسپورٹ اڈے لطیف آباد اور سٹی سے 100 فیصد بند کرنے کا فیصلہ واپس لے کر چھوٹی گاڑیوں کو سہولیات جاری رکھیں۔