حیدرآباد ،انتظامیہ مون سون سے قبل اقدامات کرنے میں ناکام

47

حیدر آباد (اسٹاف رپورٹر) مون سون کے حوالے سے ضلعی انتظامیہ اور ایچ ڈی اے حکام کی تیاریاں نہ ہونے کے برابر، شہر کے بیشتر علاقوں میں سیوریج کا نظام بیٹھ چکا ہے۔ نالے، نالیاں اوور فلو کا شکار، شاہراہوں پر گندے پانی کی شکل میں بہہ رہی ہیں، کچرے کے ڈھیر، گلی محلوں اور سڑکوں پر موجود ہیں جبکہ حیسکو بھی مکمل طور پر تباہی کے دہانے پر ہے۔ مون سون کا آغاز ہوچکا ہے اور کسی بھی وقت بارشوں کا سلسلہ شروع ہوسکتا ہے لیکن افسوس کا مقام ہے کہ قائم مقام میئر، میونسپل کمشنر سمیت کسی اعلیٰ افسر نے اس حوالے سے کوئی اقدامات نہیں کیے ہیں۔ شہر کی صورتحال بارش سے پہلے ہی یہ ہے کہ اہم ترین شاہراہوں، گلی محلوں اور بازاروں میں سیوریج کا نظام بیٹھ جانے کے باعث صورتحال خراب ہے۔ گندا پانی بہہ رہا ہے، کچرے کے ڈھیر تعفن کا باعث بن رہے ہیں، جبکہ حیسکو کی جانب سے بجلی کا نظام اتنا ناقص ہے کہ معمولی خرابی میں بھی آٹھ سے دس گھنٹے بعد عملہ پہنچتا ہے، جس کی وجہ عملے کی کمی ہے لیکن بلدیہ کے پاس عملے کی زیادتی کے باوجود افسران سے جمعدار تک کوئی کام کرنے کو تیار نہیں ہے اور یہ ہی وجہ ہے کہ شہر مسلسل تباہ حالی کا شکار ہے اور ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ایک مرتبہ پھر شہر کو ڈبو کر اس پر امداد حاصل کرکے کھانے کا پکا ارادہ کرلیا گیا۔ اس صورتحال پر منتخب نمائندے، ایم این اے، ایم پی ایز بھی خاموش تماشائی بننے ہوئے ہیں۔