حیسکو کی نااہلی ،طویل لوڈشیڈنگ ،کاروبار ٹھپ ،شہری چراغ پا

78

حیدرآباد (اسٹاف رپورٹر) شہریوں کے لیے حیسکو کی کارکردگی وبال جان بن گئی، بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ سے کاروبار ٹھپ ہوچکا جبکہ نظام زندگی بری طرح مفلوج ہوکر رہ گیا ہے، بڑے پیمانے پر کرپشن کے باعث متعدد ٹرانسفارمرز تاحل مرمت نہ ہوسکے، معمولی خرابی پر 24گھنٹے سے زائد بجلی غائب رہنے لگی۔شہریوں نے چیف جسٹس سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق حسیکو کی جانب سے بجلی چوروں کے خلاف نمائشی آپریشن اور بڑی پیمانے پر کنڈوں‘ کرپشن کے باعث ٹرانسفارمرز کی قبل ازوقت مرمت اور آئلنگ نہ ہونے کے باعث شہر کے بیشتر علاقوں میں ٹرانسفارمر خراب ہوچکے ہیں جبکہ حیسکو کے باعث متبادل ٹرانسفارمر تک نہیں ہیں جس کے باعث معمولی خرابی پر علاقے کا ٹرانسفارمر اتار کر علاقہ مکینوں کو سخت اذیت دی جاتی ہے۔ یونٹ نمبر5امید علی سب ڈویژن کا ٹرانسفارمر اتوار کی رات ایک بجے سے خراب ہے ، پیر کی شام تک اتارا بھی نہیں گیا تھا اور علاقہ مکینوں کے مطابق حیسکو عملے نے پہلی شکایت پر ہی 2 روز کا ٹائم دے دیا تھا اتنی سخت گرمی میں لوگ شدید پریشان ہیں لیکن حیسکو عملہ اپنی کمائی میں لگا ہوا ہے۔ کوئی پرسان حال نہیں ہے ۔ یہ ہی صورتحال کوہسار، گاڑی کھاتہ‘ لیاقت کالونی‘ نورانی بستی ودیگر علاقوں میں بھی ہے جہاں 14،15 گھنٹے بجلی کی بندش ایک معمول بن کر رہ گیا ہے ۔ اس حوالے سے حیسکو حکام کوئی تسلی بخش جواب دینے کو تیار نہیں ہے شکایات کرنے پر عملہ غیر اخلاقی انداز اپناتا ہے جبکہ بیشتر علاقوں میں فون ہی اٹھاتے جب دفتر میں جاکر شکایت کی جائے تو کہا تھا ہے کہ 10 گھنٹے سے بجلی نہیں تو کیا ہوا بعض علاقوں میں تو کئی روز سے نہیں ہے ،حیسکو کے رویے پر عوام نے شدید ردعمل دیتے ہوئے چیف جسٹس سے مسئلے پر نوٹس لینے اور حیسکو چیف سے جواب طلب کرنے کی اپیل کی ۔
حیسکو نااہلی