دو روزہ پانچویں کلر اینڈ کیم نمائش کا کامیابی سے اختتام

111

 

لاہور ( کامرس ڈیسک) ایکسپو سینٹرلاہور میں جاری دو روزہ پانچویں کلر اینڈ کیم نمائش کامیابی سے اختتام پذیر ہو گئی، نمائش میں چین، بھارت ، جرمنی، ترکی ،تھائی لینڈ، تائیوان سمیت دیگر ممالک سے 200سے زائد کمپنیاں شریک ہوئیں۔نمائش کے منتظمین نے ڈائیز اینڈ کیمیکلز اور لیدر کے را میٹریل کو زیرو ٹیکس کرنے کا مطالبہ کر دیا۔تفصیلات کے مطابق یہ دو روزہ نمائش ایونٹ اینڈ کانفرنس انٹرنیشنل کی جانب سے منعقد کی گئی تھی۔ آخری روز بھی تاجروں کا کافی رش رہا جنہوں نے جدید ٹیکنالوجی اور عالمی مصنوعات میں دلچسپی کا اظہار کیا۔ اتوار کو میڈیا سے گفت گو کرتے ہوئے منتظم ڈائریکٹر ایونٹ اینڈ کانفرنس انٹرنیشنل راشد الحق نے کہا کہ نمائش نے پاکستانی انڈسٹری کو کافی سہارا دیاہے، یہ بہترین پلیٹ فارم ہے۔ اس سے پاکستان کی ساکھ عالمی سطح پر بہتر ہوئی۔ انہوں نے بتایا کہ متعدد چینی اور تھائی کمپنیاں یہاں مشترکہ منصوبوں کی خواہش مند ہیں جس پر یہاں کے اسٹیک ہولڈرز کام کر رہے ہیں۔ اس موقع پر گفت گو کرتے ہوئے سرپرست اعلیٰ پنجاب ڈائی اسٹف اینڈ کیمیکلز مینوفیکچررز ایسوسی ایشن عبدالرحیم چغتائی نے کہا کہ وہ نان فائلر کو ختم کرنے پر حکومت کے شکرگزار ہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت ڈائیز اینڈ کیمیکلزاور لیدرکے را میٹریل پر بھی ٹیکس زیرو کرے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس وقت ان کے را میٹریل پر مجموعی ٹیکس 40 فیصد تک ہے جس سے ایکسپورٹ متاثر ہور ہی ہے۔ عبدالرحیم چغتائی نے مطالبہ کیا کہ سیلز ٹیکس ریفنڈ کا نظام بحال ہونے تک ایس آر او 11225 کو معطل کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان ڈالر کو قابو کرے ورنہ سرمایہ کار یہاں سے بھاگ جائیں گے۔ میڈیا سے گفت گو کرتے ہوئے چیئرمین چائنا ڈائی اسٹف انڈسٹری ایسوسی ایشن مسٹر تیان نے بتایا کہ چین ڈائیز اینڈ کیمیکلزکا دنیا میں سب سے بڑا ایکسپورٹر ہے، چین نے گزشتہ سال 1.3 ملین ٹن را میٹریل ایکسپورٹ کیا تھا،پاکستان 19 ہزار 700 ٹن را میٹریل امپورٹ کر کے تیسرے نمبر پر رہا۔ مسٹر تیان نے کہا کہ پاکستان اب خود ڈائیز بنانے کی طرف جارہا ہے جو خوش آئند ہے، پاکستان مستقبل میں ڈائیز بنانے میں خودمختار ہو سکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ دوسری بار پاکستان آئے ہیں اور پاکستانیوں کا جذبہ دیکھ کرانہیں بہت خوشی ہوئی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ چین اور پاکستان کے درمیان تعاون کومزید بڑھانے کے لیے کوششیں کریں گے۔ اس سے قبل گزشتہ شب نمائش میں شریک تمام مندوبین کے لیے نشاط ہوٹل میں ایک پرتکلف عشائیے کا اہتمام بھی کیا گیا جس میں مندوبین کو یادگاری شیلڈز پیش کی گئیں۔