قرضوں کی تحقیقات مشرف دور سے کی جائے،کمیشن سے تعاون کریں گے،نواز شریف

89

لاہور(نمائندہ جسارت)پاکستان مسلم لیگ(ن) کے قائدو سابق وزیراعظم میاں محمدنواز شریف نے کہاہے کہ قرضوں کی تحقیقات مشرف دور سے کی جائے‘ کمیشن سے تعاون کریںگے‘ کیا ہو جاتا اگر ہماری حکومت کا تسلسل قائم رہتا ؟ سلیکٹڈ وزیراعظم کی ناقص پالیسیوں سے عوام پریشان ہیں،ہمارے دور میں مودی اور واجپائی پاکستان آئے۔ جمعرات کو کوٹ لکھپت جیل میں(ن)لیگ کے سینئر رہنمائوں سے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ جیل کے اندر رہتے ہوئے بھی عوام کے مسائل پر پوری طرح توجہ مرکوز ہے ،ملکی معیشت کو انتہائی خطرات لاحق ہو چکے ہیں،مہنگائی کا سونامی عوام کے لیے مصیبت بن گیا ہے۔ انہوں نے پارٹی رہنمائوں کو ہدایت دی کہ مہنگائی سے پسی ہوئی عوام کو کسی بھی صورت اکیلا نہیں چھوڑنا ان کے حق میں ہر پلیٹ فارم پر آواز بلند کی جائے ۔نواز شریف نے کہا کہ قرضوں کی تحقیقات کے لیے کمیشن ضرور بننا چاہیے ہم کمیشن سے مکمل طور پر تعاون کریں گے اور انہیں تفصیلات فراہم کریں گے کہ ہم نے قرضوں کا پیسہ کہاں کہاں خرچ کیا اوریہ پیسہ جہاں بھی خرچ کیا وہ عوامی مفاد کے پیش نظر رکھتے ہوئے خرچ کیا جس سے ملک کے عوام آج بھی فائدہ اٹھا رہے ہیں ،دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہونا چاہیے ، ایک ایک پائی عوام کے مفاد میں خرچ کی،ہمارا مطالبہ ہے کہ کمیشن قرضوں کے حوالے سے مشرف دور کے10برس کا بھی آڈٹ ضرور کرے۔ انہوں نے کہا کہ ان کا دامن صاف ہے جو کیا ملک و قوم کے لیے کیا،اپوزیشن جماعتیں جلد سے جلد لائحہ عمل طے کریں ،عام آدمی بہت مشکل میں ہے۔نواز شریف نے کہا کہ عمران خان نے ملکی معیشت کا بیڑہ غرق کردیا ہے، وہ ناقص پالیسیوں اور انتقامی سیاست کے باعث ہٹ وکٹ ہوچکا ہے،جہانگیرترین سمیت دیگر کرپٹ لوگ اس کی اپنی جماعت میں ہیں۔سابق وزیراعظم نے کہا ہم نے آئی ایم ایف کو خیر باد کہا مگر عمران خان کشکول لے کر اس کے پاس چلا گیا،بھارتی وزیراعظم نے عمران خان کو منہ نہیں لگایا ،وہ اس کا فون سنتا ہے نہ حلف برداری میں بلاتا ہے، عمران خان کاوقت پورا ہوچکا ہے جلد اپنے انجام کو پہنچنے والا ہے۔آصف علی زرداری اور حمزہ شہباز کی گرفتاری پر ردعمل میں نواز شریف نے کہا کہ ان کی بلاوجہ گرفتاری کی گئی، عوام جانتے ہیں کیا ہورہا ہے۔نواز شریف نے کہا کہ ہم نے حکمرانی عوام کے لیے کی، ہمارا ہر فیصلہ عوام کے لیے ہوتا تھا، ہمیں احتساب کے نام پر انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے جس کا ہم ڈٹ کر مقابلہ کررہے ہیں،بہت سارے وزراء کرپشن میں ملوث ہیں کوئی نہیں دیکھ رہا ۔ان کا کہنا تھا کہ ہمارے دور میں روپیہ مستحکم تھا اور تیل کی قیمتیں کم تھیں تاہم اب عمران خان کی نااہلی نے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا، ملکی معیشت کا جنازہ نکل رہا ہے اور کوئی پوچھنے والا نہیں، (ن) لیگ نے مہنگائی کو نکیل ڈال کر رکھی تھی، عمران خان نے ملکی معیشت کا بیڑہ غرق کردیا، ان کو شرم آنی چاہیے۔ ان کا کہنا تھا کہ کیا ہو جاتا اگر ہماری حکومت کا تسلسل قائم رہتا،ہماری حکومت کی بہترین پالیسیوں کے ثمرات عوام تک پہنچنا شروع ہوگئے، ہم نے ملک سے دہشت گردی کا خاتمہ کیا ،کراچی میں امن بحال کیا ،معیشت کے لیے بہترین کام کیا اور اسٹاک ایکس چینج کو بلندیوں تک لے گئے ،ہم نے سب سے پہلے ملک میں امن وامان کو بہترکیا اور لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے لیے دن رات کام کیا ،ہم نے لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے ساتھ ساتھ بجلی کی قیمتوں میں واضح کمی کی تا کہ غریب عوام بجلی کے بل آسانی کے ساتھ ادا کرسکیں ،موجودہ حکومت نے عوام کا جینا دو بھر کر دیا ہے ،گیس کی قیمتوں کو آسمان تک پہنچا دیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں انفرااسٹرکچر کے منصوبوں پر کام کیا ،نئے ائر پورٹ بنائے،صحت اور تعلیم پر اربوں روپے خرچ کیے اور مختلف شہروں میں نئے اسپتال بنائے ،عوام آج ہمارے دور کو یاد کررہے ہیں ،ملک تیزی سے ترقی کررہا ہے تھا لیکن بد قسمتی سے ملک کو دوبارہ اندھیروں میں دھکیلا دیا گیا ہے ۔نواز شر یف سے ان کی والدہشمیم بیگم،شہباز شریف،صاحبزادی مریم نواز وخاندان کے دیگر اور سابق اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق،رکن قومی اسمبلی رانا ثناء اللہ، رکن قومی اسمبلی احسن اقبال، نہال ہاشمی سمیت دیگر رہنمائوں نے ملاقات کی۔ ملاقاتوں میں ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال سمیت حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک کے حوالے سے بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔