حیدر آباد، شدید گرمی میں فٹ پاتھ پر رکھے جنریٹر آگ برسانے لگے

41

 

حیدر آباد (اسٹاف رپورٹر) شدید اور گرمی اورحبس کے بعد ضلع بھر کی سڑکوں، فٹ پاتھوں پر لگے سیکڑوں بڑے جنیٹرز نے شہریوں پر آگ برسا دی، 2 ماہ قبل سندھ ہائی کورٹ نے ڈویژنل کمشنر اور ڈپٹی کمشنر کو ضلع بھر کی فٹ پاتھوں، سڑکوں، گرین بیلٹس سے بڑے جنیٹرز ہٹانے سے متعلق دی گئی درخواست پر قوانین کے مطابق عملدرآمد کرنے کا حکم دیا تھا۔ حیدر آباد اوراس کے نواحی علاقوں میں شدید گرمی اور حبس کا سلسلہ جاری ہے، جبکہ ضلع بھر کی فٹ پاتھوں، سڑکوں، گرین بیلٹس، مصروف ترین شاہراہوں اور تجارتی مراکز پر بینکوں، شادی ہالز، سپر مارٹس ودیگر مقامات پر لگے سیکڑوں بڑے جنیٹرز نے شہریوں نے آگ برسا دی، مختلف مقامات پربدترین ٹریفک میں اطراف میں لگے جنیٹرز نے شہریوں کی چیخیں نکال دیں جبکہ رکشوں، ٹیکسیوں، سوزوکیوں میں سوار خواتین، بچوں اوردیگرمسافروں کی جنیٹرز کی ہیٹ سے حالت غیر ہوگئی ،بجلی کی لوڈشیڈنگ کے دوران گھنٹوں جنیٹرز چلتے ہیں سندھ ہائی کورٹ نے ماہ اپریل میں ضلع کے بینکوں،مارٹس،شاپنگ سینٹرز، پلازوں، دکانداروں کی جانب سے فٹ پاتھوں، سڑکوں، گرین بیلٹس سمیت پبلک مقامات پر لگائے گئے جنیٹرز ہٹانے کے لیے دائر آئینی درخواست پر ڈویژنل کمشنر اورڈپٹی کمشنر کو درخواست گزار کی جانب سے دی گئی درخواست پر قانون کے مطابق کارروائی کرنے کا حکم دیا گیا تھا،مگر دو ماہ گزرنے کے باوجود اب تک کسی مقام سے ان غیرقانونی جنیٹرز کو نہیں ہٹایاجاسکا ہے ،جبکہ مذکورہ جنیٹرز پیدل چلنے والوں اورٹریفک میں خلل کا باعث بھی بنے ہوئے ہیں۔