شمالی کوریا نئی آبدوز بنا رہا ہے‘ امریکی ریسرچ گروپ

38

واشنگٹن (انٹرنیشنل ڈیسک) شمالی کوریا سے متعلق تجزیوں کے لیے معروف ایک امریکی ریسرچ گروپ کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا بظاہر اب بھی بیلسٹک میزائل چلانے کی صلاحیت والی ایک نئی آبدوز بنانے کا عمل جاری رکھے ہوئے ہے۔ 38 نارتھ نے مشرقی شمالی کوریا کے سنپو میں قائم ایک جہاز گاہ کی حالیہ سیٹلائٹ تصاویر پر مبنی تجزیہ بدھ کے روز جاری کیا ہے۔ اس مقام کے گزشتہ تجزیے کے مطابق وہاں ایک بیلسٹک میزائل سے لیس آبدوز بنانے کا آغاز 3 سال قبل ہو چکا تھا۔ اپریل سے جون تک لی گئی تصاویر سے متعلق گروپ کا کہنا ہے کہ تعمیراتی ہال کے قریب سازو و سامان اور مختلف حصوں کی نقل و حرکت دیکھی جا سکتی ہے۔ اپریل اور مئی میں لی گئی تصاویر کے موازنے سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ اشیا کو تجرباتی آبدوز پر لادا جا رہا ہے۔ دوسری جانب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ انہیں شمالی کوریا کے ساتھ ایٹمی سمجھوتا طے کرنے کی کوئی جلدی نہیں۔ یاد رہے کہ دونوں ممالک کے رہنماؤں کی پہلی سربراہ ملاقات کو ایک سال ہو چکا ہے۔ شمالی کوریائی رہنما کم جونگ ان نے اس ملاقات کو ایک سال مکمل ہونے سے پہلے باہمی اعتماد کے اظہار کے لیے صدر ٹرمپ کو ایک مراسلہ روانہ کیا ہے۔ صدر ٹرمپ نے بدھ کے روز وائٹ ہاؤس میں نامہ نگاروں سے خطاب کے دوران بتایا کہ انہیں ایک شاندار مراسلہ بھیجا گیا ہے اور وہ اسے سراہتے ہیں۔ انہوں نے خط کے متن کے بارے میں کچھ نہیں بتایا۔ صدر ٹرمپ نے مزید کہا کہ کم کے ساتھ ان کے تعلقات بڑے اچھے ہیں، لیکن وہ منتظر ہیں کہ آیندہ کیا ہو گا۔ شمالی کوریا میں امریکا کے اس موقف کے حوالے سے مایوسی بڑھ رہی ہے کہ امریکا اس وقت تک پابندیاں نہیں ہٹائے گا، جب تک شمالی کوریا اپنا ایٹمی پروگرام مکمل طور پر ترک نہیں کر دیتا۔