مذہبی تنازعات افہام و تفہیم سے حل کیے جائیں‘وزارت مذہبی امور

72

کراچی ( اسٹاف رپورٹر )وزارت مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی کے زیر اہتمام منعقدہ کانفرنس میں کہا گیا ہے کہ مذہبی تنازعات اور اتفاق کو باہم مشوروں ، افہام و تفہیم اور سنجیدہ مکاملے کی روشنی میں حل کیا جائے۔ایک دوسرے کی عبادتگاہوں کا احترام ملحوظ خاطر رکھا جائے۔مذہبی قائدین اشتعال انگیز بیانات اور تحریروں سے گریز کریں جن سے دوسروں کی دل آزاری ہوتی ہے۔تمام مذاہب کے اکابرین اور اسکالرز کو مذہبی ،معاشرتی، ثقافتی ہم آہنگی کے لیے ایک دوسرے کی عباد ت گاہوں جن میں مدارس ، مساجد ، مندروں ،گرجا گھروں اور گرد وارو ں کے دورے کرنے چاہیے۔یہ اعلامیہ گزشتہ روزمقامی ہوٹل میں منعقدہ کانفرنس میں جاری کیا گیا۔ کانفرنس کی صدارت وفاقی وزیر برائے مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی پیر نور الحق قادری نے کی۔ اس موقع پر مختلف سیاسی ، مذہبی،علما کرام و مشائخ و عظام ، مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد اوراسکالرز نے بھی شرکت کی۔ مشترکہ اعلامیہ میں میں مطالبہ کیا گیا کہ صوبائی حکومتیں وفاق کی قومی پالیسی برائے بین المذہب ہم آہنگی میں شمولیت اختیار کریں ، صوبائی حکومتوں کو چاہیے کہ وفاق کی طرز پراقلیتوں کو مذہبی تہوار وں کو سرکاری سطح پر منایا جائے تاکہ مذہبی ہم آہنگی فروغ پا سکے۔