لاہور ہائیکورٹ نے جج کو کرسی مارنے والے وکیل کی سزا معطل کر دی

23

لاہور (نمائندہ جسارت) لاہورہائی کورٹ کے جج جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ نے انسداد دہشت گردی عدالت کا فیصلہ معطل کرتے ہوئے جج کو کرسی مارنے والے وکیل کو 2لاکھ روپے کے مچلکے جمع کرانے پرضمانت پر رہا کرنے کا حکم دے دیا، انسداد دہشت گردی کی عدالت نے سول جج پر حملہ کیس کے ملزم عمران منج نامی وکیل کو 18 سال 6ماہ قید اور ڈھائی لاکھ روپے جرمانہ اور ہرجانہ ادا
کرنے کا بھی حکم سنایا تھا۔ خیال رہے مقامی عدالت میں ایک کیس پر بحث کے دوران معمولی تلخ کلامی پر وکیل نے جج کے سر پر کرسی دے ماری تھی۔ جج کو زخمی حالت میں تحصیل ہیڈ کوارٹر اسپتال میں منتقل کیا گیا جہاں انہیں ابتدائی طبی امداد فراہم کی گئی اور میڈیکل رپورٹ کی بنیاد پر ملزم کے خلاف ایف آئی آر درج کروا دی گئی تھی۔
سزا معطل