جی 20 کانفرنس کے بعد چین پر مزید ٹیکس لگانے کا امریکی عندیہ

26

واشنگٹن (انٹرنیشنل ڈیسک) امریکی صدر ٹرمپ نے کہا ہے کہ رواں ماہ کے آخر میں جی 20 کے سربراہ اجلاس میں چین کے صدر سے تجارتی معاہدے کے سلسلے میں اتفاق نہ ہوا تو وہ چین کے خلاف مزید محصولات عائد کرنے کے لیے تیا ر ہیں۔ گزشتہ ماہ واشنگٹن میں چین اور امریکا کے درمیان 2روزہ تجارتی مذاکرات بے نتیجہ رہے تھے، جس کے بعد سے صدر ٹرمپ کئی بار کہہ چکے ہیں کہ وہ 28 اور 29 جون کو جاپان کے شہر اوساکا میں جی 20 سربراہ کانفرنس کے موقع پر چینی صدر شی جن پنگ سے خود معاملات طے کریں گے۔ تاہم چین نے ایسی کسی ملاقات کے طے ہونے کی تصدیق نہیں کی۔ اس سے قبل ٹرمپ نے کہا تھا کہ وہ دنیا کی سب سے بڑی معیشتوں کے سربراہان سے ملاقات کے بعد فیصلہ کریں گے کہ انہیں 300 ارب ڈالر کے چینی سامان پر محصولات لگانے ہیں یا نہیں۔ ایک انٹرویو میں ٹرمپ نے کہا کہ اب بھی ان کا خیال ہے کہ چینی صدر سربراہ اجلاس میں شریک ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ چینی صدر وہاں نہ آئے تو بھی امریکا چین کے سامان پر نئے محصولات لگا دے گا۔ ٹرمپ نے دعویٰ کیا کہ بیجنگ امریکا کے ساتھ تجارتی معاہدہ کرنا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کوئی معاہدہ نہ ہوا تو دنیا چین سے تجارتی محصولات میں اضافہ ہوتا دیکھے گی۔