شام میں اسدی اور روسی بمباری‘20 شہری شہید

43

دمشق (انٹرنیشنل ڈیسک) شام میں اسدی اور روسی طیاروں نے ادلب کے مختلف علاقوں پر بمباری تیز کر دی ہے۔ بدھ کے روز امدادی کارکنوں نے بتایا کہ گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران ان حملوں کے نتیجے میں مزید 20 شہری مارے گئے ہیں۔ شہری دفاع تنظیم کے مطابق خان شیخون کے مرکز میں بمباری سے درجنوں افراد زخمی بھی ہوئے۔ حقوق انسانی کی شامی تنظیم نے ان خبروں کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ کئی زخمیوں کی حالت نازک ہے۔ یہ بھی اطلاعات ہیں کہ ادلب اور حما میں شامی فضائیہ نے درجنوں حملے کیے ہیں۔ دوسری جانب ترک فوج نے شام کے علاقے تل رفعت میں اپنے ایک فوجی کی ہلاکت کے جواب میں کارروائی کرکے 10 کرد جنگجوؤں کو ہلاک کردیا۔ ترک وزارت دفاع نے ایک بیان میں کہا کہ ہلاک ہونے والے جنگجوؤں کا تعلق کرد ملیشیا وائی پی جی سے تھا۔ترکی اس ملیشیا کو کالعدم جنگجو گروپ کردستان ورکرز پارٹی (پی کے کے ) کا حصہ خیال کرتا ہے۔ ادھر شام میں بشار الاسد انتظامیہ کے خلاف اس کے گڑھ لاذقیہ میں احتجاج کیا گیا۔ اطلاع کے مطابق شام کے مغرب میں انتظامیہ کے قلعے کی حیثیت کے حامل لاذقیہ میں لوڈ شیڈنگ سے سے تنگ آئے شہریوں کے ایک گروپ نے انتظامیہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مظاہرین کے گروپ نے آزاد شامی فوج کے حق میں نعرے بھی لگائے۔ اس طرح اسد خاندان کے آبائی علاقے میں اپریل 2013ء کے بعد سے اب تک پہلی دفعہ احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ واضح رہے کہ لاذقیہ میں عوامی انقلاب کے ابتدائی دنوں میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے تھے، لیکن فوج نے طاقت کا استعمال کر کے انہیں دبا دیا تھا۔
نیویارک میں ہیلی کاپٹر بلندوبالاعمارت سے ٹکرا کر تباہ
نیویارک (انٹرنیشنل ڈیسک) نیویارک کے علاقے مین ہیٹن میں ہیلی کاپٹر بلند عمارت سے ٹکرا کر تباہ ہو گیا۔ مقامی میڈیا کے مطابق واقعے میں پائلٹ ہلاک ہو گیا، تاہم کوئی اور شخص ہلاک یا زخمی نہیں ہوا۔ حادثے کے بعد متاثرہ عمارت کو خالی کرا لیا گیا۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق بارش اور خراب موسم کے باعث پائلٹ ایمرجنسی لینڈنگ کرنا چاہتا تھا۔ اس دوران ہیلی کاپٹر عمارت سے ٹکراگیا۔ حادثے کے باعث عمارت کی اوپری منزلیں لرز گئیں۔ تحقیقی عملہ یہ پتا لگانے کی کوشش کررہا ہے کہ ہیلی کاپٹر کا پائلٹ محکمہ ہوابازی کی اجازت کے بغیر انتہائی سخت سیکورٹی والی فضائی حدود میں کیوں پرواز کر رہا تھا۔