سوڈانی فوج نے 3 اپوزیشن رہنما جلاوطن کردیے

54

خرطوم (انٹرنیشنل ڈیسک) سوڈان میں اقتدار پر قابض فوجی کونسل نے حزب اختلاف سے تعلق رکھنے والی ایک سرکردہ تحریک کے 3 رہنماؤں کو مذاکرات ناکام ہونے کے بعد ملک بدر کرکے جنوبی سوڈان کے دارالحکومت جوبا بھیج دیا ہے۔ ان تینوں کو گزشتہ ہفتے دارالحکومت خرطوم سے گرفتار کیا گیا تھا اور وہ سوڈان پیپلز لبریشن موومنٹ شمال ( ایس پی ایل ایم این) کے ارکان ہیں۔ان تینوں میں سب سے نمایاں اس تحریک کے نائب سربراہ یاسر ارمان ہیں۔ وہ سوڈان کے مطلق العنان صدر عمر حسن البشیر کی 11 اپریل کو معزولی کے بعد خود ساختہ جلاوطنی کی زندگی ختم کرکے خرطوم لوٹے تھے۔ انہیں حکام نے گزشتہ بدھ کو ان کی قیام گاہ سے گرفتار کر لیا تھا۔ اسی تحریک کے 2 اور رہنما سیکرٹری جنرل اسماعیل جلاب اور ترجمان مبارک ارضول کو ایتھوپیا کے وزیراعظم ابی احمد سے خرطوم میں ملاقات کے فوری بعد گرفتار کر لیا گیا تھا۔ابی احمد سوڈان کی حکمراں عبوری فوجی کونسل اور حزب اختلاف کے درمیان مصالحت کے لیے کوشاں ہیں، لیکن ان کی ثالثی کی کوششیں سوڈان میں جاری بحران کے حل کے لیے ابھی تک رنگ نہیں لاسکی ہیں۔ ایس پی ایل ایم این کے چیئرمین ملک اگر نے کہا ہے کہ ان کی جماعت کے 3 عہدے داروں کو گرفتار کیا گیا تھا۔ ان تک رسائی دینے سے انکار کیا گیا اور پھر انہیں ایک فوجی طیارے کے ذریعے جنوبی سوڈان کے دارالحکومت جوبا روانہ کردیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انہیں ملک سے جبری بے دخل کیا گیا ہے۔اس اقدام سے ظاہری ہوتا ہے کہ فوجی کونسل اقتدار ایک شہری حکومت کے حوالے نہیں کرنا چاہتی ہے اور وہ ملک میں امن بھی نہیں چاہتی ہے۔ دوسری جانب ایتھوپیا کے وزیر اعظم ابی احمد اور سوڈانی فوجی کونسل کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل عبدالفتاح البرہان میں رابطہ بھی ہوا ہے۔
بھارت: ہندو لڑکی نے مسلمان خاندان کو انتہاپسندوں سے بچالیا
نئی دہلی (انٹرنیشنل ڈیسک) بھارت میں ہندو لڑکی نے اپنی مسلمان سہیلی اور اس کے اہل خانہ کو انتہا پسند ہندوؤں کے قاتلانہ حملے سے بچالیا۔ علی گڑھ میں ڈھائی سالہ ہندو بچی کے قتل کے بعد سے حالات نہایت کشیدہ ہیں۔ مقامی ہندو ؤں نے قتل کا الزام 2 مسلمان گھرانوں پر لگایا، جن کے ساتھ لین دین کے معاملے پر ان کے اختلافات تھے۔ انتہا پسندوں نے واقعے کو مسلم کش فسادات کے لیے استعمال کیا اور علی گڑھ سے ایک گاڑی میں گزرنے والے مسلمان گھرانے پر ڈنڈوں اور تیز دھار آلات سے حملہ کردیا۔ ہجوم نے گاڑی میں سوار افراد کو تشدد کا نشانہ بنایا، تاہم ساتھ موجود پوجا چوہان نے بلوائیوں کے سامنے کھڑے ہوکر مسلمان گھرانے کو بچالیا۔