ایس ڈی ایم کا تاجروں سے بھتا لینا قابل مذمت ہے،ہارون میمن

30

سکھر( نمائندہ جسارت)آل سکھر اسمال ٹریڈرز اینڈ کاٹیج انڈسٹریز کے بانی و قائد حاجی محمد ہارون میمن نے کہا ہے کہ رمضان المبارک کے آخری عشرے کے دوران ایس ڈی ایم سکھر نے شاپنگ بیگ کا بہانہ بناکر تاجروں کے ساتھ ناروا سلوک کیا اور ان کی تذلیل کرتے ہوئے پولیس موبائل وین میں چوروں اور ڈاکوئوں کی طرح بٹھا کر شہر میں گشت کرایا گیااور تاجروں پر بلاجواز 5 ہزار روپے فی دکاندار جرمانہ بھی کیا گیا۔ ایس ڈی ایم کا یہ غیر اخلاقی اور غیر ذمے دارانہ طرز عمل کا مذمت ہے تاجر برادری اس طرح کی نا انصافیاں اور ظلم و جبر کسی صورت برداشت نہیں کرے گی ۔ وہ تاجر سیکرٹریٹ شاہی بازار میں تاجروں کے وفد سے بات چیت کررہے تھے۔ اس موقع پر خواجہ جلیل احمد، بدر رفیق قریشی، حاجی صابر، سید محمود علی، صابر کپتان، فیاض خان، حاجی انور وارثی، لالا عابد کھوکھر، مولانا عثمان فیضی، برکت سولنگی ، گلزار بھٹو ، عطا محمد قریشی ، حاجی یامین اور دیگر بھی موجود تھے۔ حاجی محمد ہارون میمن نے کہا کہ ایس ڈی ایم سکھر نے تاجروں کی نہ صرف بلاوجہ بے عزتی کی اور انہیں دھمکیاں دیں جس پر تاجر برادری کو گہری تشویش ہے اور شدید مشتعل ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شاپنگ بیگ کے فروخت کے حوالے سے سندھ کے کسی بھی شہر میں کوئی کارروائی نہیں کی جارہی صرف سکھر کے تاجروں کے خلاف بلاوجواز کارروائی کرکے سکھر کے تاجروں کے ساتھ دشمنی کی جارہی ہے۔ حاجی محمد ہارون میمن نے کہا کہ بیورو کریسی حکومت اور تاجروں کے درمیان خلیج پیدا کرنے اور ٹکرائو جیسی صورتحال پیدا کرنے کے اقدامات کررہی ہے تاکہ پیپلز پارٹی کی سندھ میں صوبائی حکومت اور پیپلز پارٹی کے درمیان تاجر برادری میں نفرت پیدا کی جاسکے۔ ایس ڈی ایم نے تاجروں کے سامنے یہ بات برملا کہی کہ انہیں صوبائی حکومت کی جانب سے تاجروں کو حراساں کرنے کیلیے کہا گیا ہے ایس ڈی ایم کے اس طرح کے الفاظ سے ظاہر ہوتا ہے کہ بیوروکریسی کے بعد افسران تاجروں کو بلاجواز تنگ وپریشان کرکے حکومت کیخلاف احتجاج کروانا چاہتے ہیں۔ حاجی محمد ہارون میمن نے کہا کہ ہم نے ایس ڈی ایم سکھر کے جارحانہ رویے تاجروں کے خلاف پیش آنے والے ناروا سلوک پر وزیر اعظم پاکستان کے شکایتی سیل ، وزیر اعلیٰ سندھ اور چیف سیکرٹری سندھ کو مراسلات ارسال کردیے ہیں تاکہ ارباب اختیار کے علم میں یہ بات لائی جاسکے اور ایس ڈی ایم کے تاجروں کے ساتھ ناروا سلوک پر ان کے خلاف کارروائی ہوسکے۔ انہوں نے حکومت سندھ ،سینیٹر اسلام الدین شیخ، ارکان قومی اسمبلی سید خورشید احمد شاہ، نعمان اسلام شیخ، صوبائی وزرا سید ناصر حسین شاہ، سید اویس شاہ اور پیپلز پارٹی کے دیگر اہم رہنمائوں سے مطالبہ کیا کہ تاجروں اور حکومت کے درمیان خلیج پیدا کرنے والے بیوروکریسی کے بعد افسران خصوصاً ایس ڈی ایم سکھر کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے انہیں معطل کرکے مذکورہ معاملے کی انکوائری کرائی جائے۔ انہوں نے انتباہ دیا کہ اگر آٹھ روز کے اندر ایس ڈی ایم سکھر کے خلاف کارروائی نہ کی گئی تو سکھر کے تاجر شٹر ڈائون کرکے شدید احتجاج کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس مذکورہ معاملے پر غور کیلیے آل سکھر اسمال ٹریڈرز اینڈ کاٹیج انڈسٹریز میں شامل 55 سے زائد تاجر تنظیموں کا اجلاس آج 10 جون کو تاجر سیکرٹریٹ شاہی بازار میں ہوگا جس میں تاجر برادری مزید لائحہ عمل تیار کرے گی۔