لاڑکانہ، باراتیوں سے بھری بس کو حادثہ، 3 جاں بحق، دولہا زخمی

47

 

لاڑکانہ(نمائندہ جسارت) شادی کے بعد واپسی پر بارات حادثے کا شکار دو بچوں سمیت تین افراد جاںبحق دولہا دلہن سمیت پانچ افراد زخمی خوشیاں ماتم میں تبدیل۔تفصیلات کے مطابق لاڑکانہ سے اوباڑو واپس جانے والی بارات نوڈیرو کے قریب پنجودیرو کے مقام پر حادثے کا شکار ہوگئی کار اور ڈاٹسن میں خوفناک تصادم کے نتیجے میں دو بچے عابد، جہانگیر اور نوجوان نزاکت میرانی موقع پر جاںبحق ہوگئے جبکہ دولہا اور دلہن سمیت پانچ افراد شدید زخمی ہوگئے۔ حادثے کے بعد سکھر سے لاڑکانہ آتے ہوئے اے ایس پی کلیم نے حادثے کے پیش نظر متعلقہ پولیس کو تمام زخمیوں اور جاںبحق افراد کی نعشوں کو شعبہ حادثات منتقل کرنے کی ہدایات دیں زخمیوں کو طبی امداد دی جارہی ہے جبکہ نعشیں ورثا کے حوالے کر دی گئیں ہیں۔ لاڑکانہ کی عدالت نے قتل کا جرم ثابت ہونے پر ملزم کو عمر قید، 13 سال قید اور 4 لاکھ 10 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنادی ہے جرمانے کی رقم ادا نہ کرنے کی صورت میں ملزم مزید ایک سال قید کاٹے گا۔ لاڑکانہ کی فرسٹ ایڈیشنل سیشن و ماڈل ٹرائل کورٹ کے جج شیام لال کی عدالت میں سال 2014 ء میں قتل ہونے والے عابد موہل کے مقدمے کی سماعت ہوئی جہاں جرم ثابت ہونے پر عدالت نے ملزم محسن عرف مْسو موہل کو عمر قید، 13 سال قید اور 4 لاکھ 10 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنادی، جرمانے کی رقم ادا نہ کرنے کی صورت میں ملزم مزید ایک سال قید کاٹے گا۔ واضع رہے کہ یکم فروری 2014ء پر تھانہ تعلقہ کی حدود میں ملزم نے پیسوں کے معاملے پر فائرنگ کرکے اپنے رشتے دار عابد موہل کو قتل جبکہ بخشن موہل کو زخمی کیا تھا جس واقعے کا مقدمہ مقتول کے چچا زاد بھائی حاتم علی موہل کی مدعیت درج کیا گیا تھا۔ لاڑکانہ شہر کے تھانہ سول لائین کی حدود پیپلز کالونی میں گھریلو ناچاقی پر الیکٹریشن بابر ابڑو پر اپنے ہی والد نے مبینہ طور پر پیٹرول چھڑک کر آگ لگاکر شدید زخمی کردیا جسے ورثا نے زخمی حالت میں چانڈکا اسپتال کے شعبہ حادثات منتقل کیا جہاں انہیں طبی امداد دی گئی۔ اس موقع پر زخمی نوجوان کے بھائی ممتاز ابڑو نے الزام عائد کیا کہ میرے والد نے پہلے بھی بھائی محمد رمضان کو آگ لگاکر قتل کیا آج پھر گھریلو ناچاقی پر والد نے طیش میں آکر بھائی بابر ابڑو پر پیٹرول چھڑک کر اسے مارنے کی کوشش جسے اسپتال منتقل کیا گیا ہے۔ دوسری جانب آخری اطلاع موصول ہونے تک واقعے کا مقدمہ درج نہ ہوسکا اور نہ کوئی گرفتاری عمل میں آسکی۔