بلدیہ عظمیٰ:افسران کے اخبارات اور سرکاری فون بند کرنے کافیصلہ

39

کراچی(اسٹا ف رپورٹر)میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی میں غیرترقیاتی اخراجات میں کمی لانے کے لیے افسران کے پیٹرول کوٹے کے ازسر نو تعین، گھروں اور دفتروں میں اخبارات اور گھروں پر سرکاری ٹیلی فون بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے، توقع ہے کہ اس اقدام سے سالانہ تقریباً 5 کروڑ روپے کی بچت ہو گی جو ترقیاتی کاموں پر خرچ کئے جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کو آئندہ مالی سال کے میزانیہ اور اے ڈی پی کی اسکیموں کو حتمی شکل دینے کے لیے منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اجلاس میں ڈپٹی میئر کراچی سید ارشد حسن، میٹروپولیٹن کمشنر ڈاکٹر سید سیف الرحمن اور بلدیہ عظمیٰ کراچی کے محکمہ جاتی سربراہان نے شرکت کی۔اجلاس میں آئندہ مالی سال کے مجوزہ میزانیہ پر تفصیل سے غور کیا گیا اور فیصلہ کیا گیا کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی میں غیرترقیاتی اخراجات میں ہر ممکن کمی کی جائے تاکہ دستیاب مالی وسائل کو زیاد سے زیادہ ترقیاتی منصوبوں کے لیے مختص کیا جاسکے اور آئندہ مالی سال کے میزانیہ میں شہریوں کو زیادہ سے زیادہ سہولتیں فراہم کرنے کی کوشش کی جائے، میئر کراچی وسیم اختر نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت کراچی کے شہری سہولیات کے حوالے سے شدید پریشانی کے عالم میں ہیں لہٰذا موجودہ صورتحال میں جتنی الامکان کوشش کرنی چاہیے کہ ان کو روزمرہ زندگی میں سہولت دی جائے انہوں نے کہا کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے مختلف محکموں میں ردوبدل کے ساتھ ساتھ انتظامی طور پر بھی بہتری لائی جا رہی ہے تاکہ ماضی میں مختلف اوقات میں جو خرابیاں پیدا ہوئیں ان کو دور کرکے آئندہ کے لیے بہتری لائی جائے۔ انہوں نے کہا کہ بغیر پوسٹنگ افسران کا پیٹرول بند کرنے سے بلدیہ عظمیٰ کراچی کو 30 لاکھ روپے ماہانہ بچت ہوئی ہے جو 3کروڑ 60 لاکھ روپے سالانہ بنتا ہے جبکہ پیٹرول اخراجات کو مزید کم کرنے پر غور کیا جا رہا ہے توقع ہے کہ غیر ترقیاتی اخراجات میں کمی سے آئندہ مالی سال کے دوران تقریباً 5 کروڑ روپے کی بچت کی جا سکے گی اور یہ رقم شہر میں ترقیاتی کاموں پر خرچ کی جائے گی۔ میئر کراچی نے کہا کہ اس وقت ملک کو بدترین معاشی بحران سے کراچی ہی نکال سکتا ہے حکومت کو چاہیے کہ کراچی کی ترقی پر زیادہ توجہ دے کیونکہ کراچی ترقی کرے گا تو ملک ترقی کرے گا۔علاوہ ازیںمیئر کراچی وسیم اختر کی ہدایت پر بلدیہ عظمیٰ کراچی کے محکمہ انسداد تجاوزات نے ضلع وسطی میں مختلف مقامات پر کارروائی کرتے ہوئے تقریباً 65 مقامات پر فٹ پاتھ اور سڑک کے کنارے قائم فلاحی اداروں کے دفاتر اوردسترخوان مسمار کردیے جبکہ ضلع شرقی میں آج (12 جون) کو کارروائی کی جائے گی‘عدالت عظمیٰ کی ہدایات کے تحت انسداد تجاوزات کے اس آپریشن میں جن اداروں کی طرف سے فٹ پاتھ پر قائم دفاتر مسمار کیے گئے۔قبل ازیں بلدیہ عظمیٰ کراچی نے محکمہ انسداد تجاوزات کے ذریعے مذکورہ بالا فلاحی اداروں کو تین مرتبہ نوٹس جاری کیا تھا کہ وہ اپنے دسترخوان، دفاتر اور پنجرے وغیرہ فٹ پاتھوں سے ہٹالیں بصورت دیگر ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔