ـ30 جون تک نے نامی اثاثے ظاہرکردیں،پھر موقع نہیں ملے گا،وزیراعظم

60
اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت پنجاب کے بجٹ کے حوالے سے جائزہ اجلاس ہورہا ہے
اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت پنجاب کے بجٹ کے حوالے سے جائزہ اجلاس ہورہا ہے

اسلام آباد (اے پی پی) وزیر اعظم عمران خان نے عوام سے اپیل کی ہے کہ اپنے اثاثے ظاہر کرنے کی ا سکیم سے فائدہ اٹھا کر ملک کو پائوں پر کھڑا کرنے ، لوگوں کو غربت سے نکالنے اور اپنے بچوں کا مستقبل محفوظ بنانے میں مدد دیں۔ جب تک ہم ٹیکس نہیں دینگے ہمارا ملک اوپر نہیں جا سکتا، بے نامی اثاثے، بینک اکائونٹس اور باہر پڑا پیسہ ظاہر کرنے کا 30 جون تک وقت ہے۔ اس کے بعد موقع نہیں ملے گا۔پاکستانیوں کی بیرون ملک جایدادوں اور بینک اکائونٹس کی معلومات کے معاہدے ہو چکے ہیں۔ عظیم قوم بننے کے لیے ہمیں اپنے آپ کو تبدیل کرنا ہوگا۔ پیر کو پاکستان ٹیلی ویژن اور ریڈیو پر قوم کے نام اہم پیغام میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پچھلے دس سال میں پاکستان کا قرضہ 6 ہزار ارب روپے سے بڑھ کر 30 ہزار ارب روپے تک پہنچ گیا۔ اس کا عوام کو یہ نقصان ہوا ہے کہ ہم سالانہ چار ہزار ارب روپے جو ٹیکس جمع کرتے ہیں اس میں سے آدھا یعنی دو ہزار ارب روپے ان قرضوں کی اقساط ادا کرنے پر خرچ ہو جاتا ہے اور باقی بچ جانے والی رقم سے ملک کے خرچے پورے نہیں ہو سکتے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی وہ قوم ہیں جو بد قسمتی سے سب سے کم ٹیکس دیتے ہیں لیکن خیرات سب سے زیادہ ادا کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے اندر جذبہ آگیا تو ہم سالانہ دس ہزار ارب روپے تک بھی ٹیکس جمع کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جب تک ہم ٹیکس نہیں دیںگے ہمارا ملک اوپر نہیں اٹھ سکے گا۔ بے نامی اثاثے ، بینک اکائونٹس اور باہر پڑا پیسہ ظاہر کرنے کا 30جون تک وقت ہے۔ سب سے اپیل ہے کہ اثاثے ظاہر کرنے کی ا سکیم میں شرکت کریں ۔ بے نامی اکائونٹس اور بے نامی اثاثوں اور بیرون ملک پاکستانیوں کی جایدادوں کی معلومات آ رہی ہیں اور اس سلسلے میں معاہدے بھی ہوئے ہیں۔ ہماری حکومت کے پاس وہ معلومات ہیں جو پہلے کسی حکومت کے پاس نہیں تھیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ جب تک کوئی قوم خود کوشش نہ کرے اللہ تعالیٰ اس کی حالت نہیں بدلتا ، اثاثے ظاہر کرنے کی اسکیم سے فائدہ اٹھائیں اور ملک کو فائدہ دیں اور اپنے بچوں کا مستقبل محفوط بنائیں ، موقع دیں کے ہم ملک کو پائوں پر کھڑا کریں اور لوگوں کو غربت سے نکالیں۔علاوہ ازیں وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک کی مالیاتی صورتحال ہر سطح پر کفایت شعاری کی متقاضی ہے اور اس سلسلے میں اعلیٰ ترین سے مثال قائم کرنے کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پیر کو وزیراعظم آفس میں پنجاب کے سالانہ بجٹ 2019-20ء سے متعلق بریفنگ کے دوران کیا۔ بریفنگ میں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار، وفاقی وزیر منصوبہ بندی مخدوم خسرو بختیار، وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت عبدالرزاق دائود، پنجاب کے وزیر خزانہ مخدوم ہاشم جواں بخت، سیکرٹری خزانہ، پنجاب کے چیف سیکرٹری، گورنر سٹیٹ بینک، چیئرمین ایف بی آر اور دیگر اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔ بریفنگ کے دوران وزیراعظم کو بتایا گیا کہ پنجاب کا بجٹ پاکستان تحریک انصاف کے منشور کے عین مطابق ہوگا جس میں سماجی شعبہ، زراعت اور صنعت کے لیے زیادہ رقوم کی تخصیص کے ساتھ انسانی ترقی اور علاقائی مساوات پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ ترقیاتی منصوبوں میں سرکاری اور نجی شراکت کے فروغ پر خصوصی دھیان دیا گیا ہے۔