قابل تجدیدوسائل سے توانائی کا حصول وقت کی اہم ضرورت ہے‘چودھری سجاد

44

اسلام آباد( نمائندہ جسارت) سارک ایس ایم اے کمیٹی کے وائس چیئرمین چودھرری سجاد سرور اور تاجر رہنماء اسلام آبادا سمال چیمبر کے سابق صدر رانا محمد ایاز نے کہا ہے کہ روایتی ذرائع کے بجائے قابل تجدیدوسائل سے توانائی کا حصول وقت کی اہم ضرورت ہے، کیونکہ فوسل فیولز سے حاصل کردہ توانائی مہنگی ہونے کے ساتھ ساتھ ماحول کے لیے نقصان دہ ہے اتوار کو اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ زیادہ لاگت اور عوام میں ان سے متعلق آگاہی نہ ہونے کی وجہ سے قابل تجدید توانائی عام استعمال میں نہیں ہے ان وسائل کو عام آدمی کی پہنچ میں لانے کیلیے ان پر سے ٹیکسز اور ڈیوٹیز کم کیے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ فوسل فیولز قابل تجدید نہیں ہیں بلکہ یہ نہایت مہنگے، ماحول کے لیے نقصان دہ اور بتدریج کم ہو رہے ہیں۔جبکہ قابل تجدید توانائی کے وسائل جیسے سورج اور ہوا کبھی ختم نہیں ہوں گے۔ پاکستان اپنی توانائی کی ضروریات کا بیشتر حصہ فوسل فیولز سے ہی پورا کرتا ہے اور ہر سال پٹرولیم مصنوعات کی درآمد پر اربوں روپے خرچ کرتا ہے انہوں نے کہا کہ اس مقصد کے حصول کیلیے حکومتی اداروں کو بھی برآمدات میں اضافہ کیلئے صنعتی شعبے کے فروغ کیلیے کام کرنا چاہیے توانائی کے قابل تجدید وسائل سے حصول کیلیے سرمایہ کاری اور پالیسی سازی کی ضرورت ہے۔