خطے میں امن کیلیے مودی کو اعتدال کی طرف آنا ہوگا،لیاقت بلوچ

89

لاہور (نمائندہ جسارت) قائم مقام امیر جماعت اسلامی پاکستان و سیاسی امور کمیٹی کے صدر لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ نریندر مودی کو خطے میں امن لانے کے لیے اپنے انتہا پسند رجحانات کو چھوڑ کر اعتدال کی طرف آنا ہوگا، بھارتی انتخابات میں نریندر مودی 5 سال ناکام دور اقتدار کے باوجود کشمیریوں پر ظلم ، پاکستان کے خلاف جنگی جنون اچھا ل کراور ہندو تعصب بھڑکا کر جیت گئے ہیں۔بھارتی انتخابی نتائج کو بھارتی اپوزیشن نے بھی تسلیم کرلیا ہے ،یہی جمہوریت کا حسن ہے۔بی جے پی کا دوبارہ برسر اقتدار آنا ایک کھلی حقیقت ہے۔مسئلہ کشمیر کو کشمیریوں کی مرضی کے مطابق حل کرکے جنوبی ایشیاکے2 ارب انسان ترقی کا بام عروج پاسکتے ہیں۔بھارت کا غیر حقیقت پسندانہ رویہ خطے میں استعماری قوتوں کو شیطانی کھیل کے مواقع مہیا کرتا چلا آرہا ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے جامع مسجد الرحیم گلبرگ لاہور میں جمعہ کے بڑے اجتماع اور بعد ازاں منصورہ میں مزدوروںکے نمائندہ وفد سے ملاقات کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ لیاقت بلوچ نے کہا کہ عمران خان سرکار نے نئے پاکستان کے خواب اور دعوئوں کو قلیل مدت میں باطل بنا دیا ہے۔مہنگائی ، بیروزگاری اور آئی ایم ایف کی کڑی شرائط کے ساتھ غلامی عوام کے لیے ناقابل برداشت ہے۔نوجوان اپنے بکھرتے خوابوں سے پریشان اور حیران ہیں۔سب کے لیے یہ حیران کن امر ہے کہ پی ٹی آئی کے پاس نہ مہارت ہے نہ ہنر مندی ،نہ منصوبہ سازی اورتیاری نام کی کوئی چیز۔سود کی شرح مسلسل بڑھتی جارہی ہے۔ قرضوں کا اندرونی اور بیرونی بڑھتا بوجھ اقتصادی نظام کو بانجھ بنا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی کسانوں ،مزدوروں ،صنعت کاروں اور تاجروں کو تنہا اور لاوارث نہیں چھوڑے گی۔ حکومت کی بے حسی ،ناکامی اور نااہلی کے خلاف 16جون سے فیصل آباد سے مظلوم اور بے کس عوام کی ترجمانی کرتے ہوئے عوامی مارچ کا آغاز کردے گی۔اب یہ نوشتہ دیوار ہے کہ عمران خان کی نااہلی اور پی ٹی آئی کی حکومت ایک ساتھ نہیں چل سکتی۔کوئی ایک جائے یا دونوں کی رخصتی زبان خلق اور نقارہ خدا ہے۔