حیدر آباد،رسالہ روڈ پر پھر تجاوزات قائم ،بد ترین ٹریفک جام رہنے لگا

77

حیدر آباد (اسٹاف رپورٹر) رسالہ روڈ شوپارٹس کے چند بااثر دکانداروں نے ٹریفک پولیس کو دھونس ، دھمکیوں اورسیاسی دبائوڈال کر ڈی سی کمپائونڈ کے ساتھ سٹی کی مصروف ترین شاہراہ پرغیرقانونی ورکشاپس قائم کردیے،دکانداروں نے سڑک سے گاڑیاں اٹھانے والے لفٹر کا گھیرائو کرکے ٹریفک پولیس کو کارروائی کرنے سے روک دیا۔تفصیلات کے مطابق سٹی کے مرکز رسالہ روڈ پر ڈی سی ہائو س اورکمپائونڈ کے ساتھ بااثر شوپارٹس دکانداروں نے ایک بار پھر دھونس ،دھمکیوں کے بعد سڑک پر پارکنگ کی آڑ میں ورکشاپس قائم کردیے،جس کے بعد پورے علاقے میں بدترین ٹریفک جام کاسلسلہ شروع ہوگیا،سپریم کورٹ اورسندھ ہائی کورٹ نے سڑکوں ،فٹ پاتھوں ،گرین بیلٹس سمیت دیگر تمام مقامات سے غیرقانونی تجاوزات،ورکشاپس اورٹریفک جام کا مسئلہ پیداکرنے پیدل چلنے والوں کے لیے روکاوٹ بنے والی تمام تجاوزات ختم کرنے کے احکامات دئیے تھے ،یہاں تک کے عدالت عظمیٰ نے تمام رفاحی ٹرسٹوں کے فٹ پاتھوں اورسڑکوں سے دسترخوان بھی ختم کرنے کا حکم دیا ہے، ان احکامات کی روشنی میں ڈپٹی کمشنر سید اعجاز علی شاہ نے عملدرآمد کرنے ہوئے 21 فروری 2019ء کو حکم نامہ نمبر268جاری کرتے ہوئے ڈی ایس پی ٹریفک کنٹومنٹ بورڈکورسالہ روڈ پر ڈی سی کمپائونڈ کے ساتھ غیرقانونی پارکنگ/ورکشاپس ختم کرانے کے احکامات دیے تھے، جبکہ مذکورہ حکم نامے کی کاپی ایس ایس پی حیدر آباد، میونسپل کمشنر بلدیہ اعلیٰ حیدر آباد، اسسٹنٹ کمشنر سٹی کو بھی بھیجی گئی تھی ،ان احکامات پر عملدرآمد کرتے ہوئے ٹریفک پولیس کی جانب سے روزانہ ڈی سی کمپائونڈ کے ساتھ کھڑی گاڑیوں کو لفٹر کی مدد سے اٹھایاجارہا تھا اور چالان کیے جارہے تھے مگر گزشتہ روز بعض دکانداروں نے ٹریفک پولیس کے لفٹرکاگھیرائو کرکے کارروائی نہیں کرنے دی اوردھمکیاں دیں جس کے بعد ٹریفک پولیس کے آفیسر دائود رحمان نے علاقے کا دورہ کیا گیاا ور شوپارٹس مارکیٹ کے دکانداروں کے ساتھ مذاکرات کرتے ہوئے مبینہ طورپر انہیں سڑک پر ورکشاپس کرنے کی اجازت دیتے ہوئے عدالت عظمی ،ڈپٹی کمشنر اورایڈیشنل آئی جی کے احکامات کی دھجیاں اڑادیں ،رسالہ روڈ پر تقریبا ایک درجن شوپارٹس کی دکانیں قائم ہیں جبکہ مذکورہ روڈ پر نصف درجن سے زائد اسکول ہیں اور ہزاروں گاڑیاں یہاں سے گزرتی ہیں ،مگرچند دکانداروں کے دبائو،سیاسی اثررسوخ ،دھمکیوں پر انہیں سڑک پر ورکشاپس قائم کرنے کیلیے اجازت نامہ جاری کرانے کی کوشش کی جارہی ہے جبکہ دوسرے طرف ایڈیشنل آئی جی اورایس ایس پی ٹریفک مسائل کے حل کیلیے کوششیں کررہے ہیں مگر ٹریفک پولیس کی بدعنوان ان کاوشوں کو کامیاب نہیں ہونے دے رہی ہے۔ شہریوں نے ڈویژنل کمشنر محمد عباس بلوچ،ڈپٹی کمشنر سید اعجاز علی شاہ ،ایڈیشنل آئی جی ،ایس ایس پی سرفراز نواز شیخ سمیت اعلی حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ سیاسی دبائو،دھونس دھمکی ،سفارش کو مسترد کرتے ہوئے سٹی کی مصروف ترین شاہراہ پر قائم غیرقانونی ورکشاپس ختم کرائیں جائیں تاکہ ٹریفک جام کا خاتمہ اورپیدل چلنے والوں کی مشکلات کم ہوسکیں۔