ماہ صیام میں اسرائیل چھاپے ،فلسطینیوں پر فائرنگ گرفتاریاں جاری

65

مقبوضہ بیت المقدس (انٹرنیشنل ڈیسک) قابض اسرائیلی فوج کے فلسطینی علاقوں میں ماہ صیام کے دوران بھی کریک کریک ڈاؤن جاری رکھا ہوا ہے، جس کے نتیجے میں مختلف علاقوں سے نوجوانوں سمیت دیگر شہریوں کو اغوا کرنے اور گھر میں گھس کر تشدد اور لوٹ مار کے واقعات معمول بن گئے ہیں۔ مرکز اطلاعات فلسطین کے مطابق اسرائیلی فوج نے گزشتہ روز بھی مغربی کنارے میں کئی گھروں پر چھاپا مارا اور 2 فلسطینی شہریوں کو اغوا کر لیا۔ مقامی ذرائع کے مطابق قابض اسرائیلی فوج نے الجلزون پناہ گزین کیمپ میں اپنی سزا پوری کرنے والے اسیر حسین باسوس کو اغوا کیا۔ علاوہ ازیں قلندیہ گزرگاہ سے چند فلسطینی نوجوانوں کو گرفتار کر لیا گیا جب وہ مسجد اقصیٰ سے گھر واپس کی طرف واپس آرہے تھے۔ ایک اور فلسطینی نوجوان جس کی شناخت تاحال نہیں ہو سکی، کو قابض فوج نے الخلیل شہر میں مسجد ابراہیمی کے قریب گولی مارنے کے بعد گرفتار کر لیا۔ اسی دوران قابض صہیونی فوج نے الخلیل میں یطا قصبے کے مشرق میں التوانی قصبے میں گھروں پر چھاپا مارا اور لوٹ مار کی۔ اس سے پہلے قابض صہیونی فوج نے نابلس کے جنوب مشرق میں قصرۃ گاؤں پر دھاوا بولا۔ دریں اثنا نابلس میں فلسطینی اتھارٹی نے سیکورٹی احکامات کے طور پر اسرائیلی جیلوں میں اپنی سزا پوری کرنے والے سابق اسیر عبدالرحمن البشتاوی کو افطار سے کچھ دیر پہلے گرفتار کر لیا اور اسی طرح اپنی سزا پوری کرنے والے ایک اور اسیر حسام البستامی کو تفتیش کے لیے اتوار کی صبح طلب کیا گیا۔ مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق مغربی کنارے کے جنوب میں قابض صہیونی فوج کی فائرنگ سے فلسطینی شہری زخمی ہوگیا۔ وزارت صحت کے مطابق الخلیل کے مغرب میں بیت عوا قصبے کے مرکزی دروازے پر اسرائیلی فوجیوں کی فائرنگ کے دوران فلسطینی شہری ٹانگ میں گولی لگنے سے زخمی ہو گیا۔ اُدھر اسرائیلی فوج نے فلسطین کے مقبوضہ مغربی کنارے کے شمالی شہر قلقیلیہ میں کفر قدوم کے مقام پر فلسطینیوں کے ہفتہ وار احتجاجی مظاہرے پر براہ راست گولیاں چلائیں جس کے نتیجے میں 4 فلسطینی شدید زخمی اور کئی دیگر آنسو کی شیلنگ کے باعث دم گھٹنے سے بے ہوش ہوگئے۔