کارپوریٹ کپ، عمر ایسوسی ایٹس کی بحیثیت گروپ چمپئن سیمی فائنل تک رسائی

43

کراچی (اسٹاف رپورٹر) عمر ایسوسی ایٹس نے گروپ ’بی‘ میں مسلسل تیسری کامیابی کے ساتھ بحیثیت گروپ چمپئن 7 ویں کارپوریٹ ٹی ٹوئنٹی کپ کے سیمی فائنل تک رسائی حاصل کر لی۔ اسی گروپ سے اسٹیٹ بینک دوسری پوزیشن کے ساتھ سیمی فائنل کھیلنے کے لیے کامیا ب قرار پائی۔ گروپ ’اے‘ کی سیمی فائنلسٹ ٹیموں کا فیصلہ نیشنل بینک اور سوئی سدرن کی ٹیموں کے مابین مقابلے کے بعد ہوگا۔ اس گروپ میں کراچی الیکٹر ک اور سوئی سدرن کی ٹیمیں اپنے 2,2 میچ جیت چکی ہیں جبکے نیشنل بینک کو ایک کامیابی ملی ہے اور کے الیکٹرک سے انہیں شکست ہوئی تھی۔ ڈی ایچ اے اسٹیڈیم (معین خان اکیڈمی) کی فلڈ لائٹ میں کھیلے گئے پہلے میچ میں عمر ایسوسی ایٹس نے پاکستان ایئر فورس کو بآسانی 8 وکٹوں کی ہزیمت سے دوچار کیا۔ پاکستان ایئر فورس نے پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا اور مقررہ 20 اوورز کا سامنا کرکے 3 وکٹوں پر 176 رنز جوڑنے میں کامیاب رہی۔ محمد عرفان نے ذمہ دارانہ اننگز کھیلی اور 75 رنز میں 6 باؤنڈریز اور 3 بلند وبالا چھکے بھی لگائے۔ حسین طلعت نے 3 چوکوں اور ایک چھکے کے ساتھ 33 رنز کا حصہ ڈالا۔ شاہد خان کے 22رنز 2 چوکے اور ایک چھکے کی مرہون منت تھے۔ محمد عرفان نے 25 رنز پر 2 کھلاڑیوں کو پویلین کا راستہ دکھایا۔ عمر ایسوسی ایٹس نے مطلوبہ ہدف بآسانی 16.4 اوورز میں حاصل کرلیا۔ عمر اکمل نے انتہائی جارحانہ اننگز کھیلی اور 8 چھکوں اور 5 چوکوںکی مدد سے 93 رنز بنائے۔ عثمان خان نے 7 چوکوں کے ساتھ 33 اور افتخار احمد کے 25 رنز میں 3 چوکے اور ایک چھکا شامل تھا۔ حسین طلعت اور محمد عرفان کو ایک ایک وکٹ ملی۔ دوسرے میچ میں سوئی سدرن کو عادل امین کی آل راؤنڈ کارکردگی اور احمد شہزاد کی جارحانہ نصف سنچری کے باعث کے الیکٹرک پر 66 رنز کی برتری حاصل ہوئی۔ پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے سوئی سدرن کی ٹیم 19.3 اوورز میں 161 رنز بنا کر پویلین لوٹ گئی۔ احمد شہزاد نے 50 رنز میں 6 چھکے اور 5 چوکے لگائے۔ عادل امین کے 48 رنز میں 5 چوکے اور 3 چھکے شامل تھے۔ محمد عمران نے 21 رنز پر 4 بلے بازوںکو پویلین واپسی کا پروانہ تھمایا۔ محمد محسن کو 26 رنز اور حسان خان کو 35 رنز کے عوض 3,3 وکٹیں اپنے نام کرنے کا موقع ملا۔ کے الیکٹرک کی جوابی اننگز 18.2 اوورز میں زمیں بوس ہوگئی جب اسکور بورڈ پر 95 رنز کا ہندسہ آویزاں کیا گیا۔ عمیر بن یوسف 3 چوکے اور ایک چھکا لگا کر 27 رنز پر نمایاں رہے۔ عادل امین نے انتہائی کفایتی بولنگ کرتے ہوئے صرف 10 رنز کے عوض 5 حریف بلے بازوں کو میدان چھوڑنے پر مجبور کیا۔ عثمان میر کو 19 رنز پر 2 وکٹ ملیں۔ تابش احمد اور جلال الدین نے بالترتیب عمر اکمل اور عادل امین کو مین آف دی میچ ایوارڈ دیا۔