۔1975 اور 1979 کا کرکٹ ورلڈ کپ ویسٹ انڈیز کے نام رہا

94

سید پرویز قیصر

کرکٹ کا 12واں عالمی کپ انگلینڈ اور ویلس میں30 مئی سے14 جولائی کھیلا جائے گا۔ اس عالمی کپ میں 10 ٹیمیں شرکت کررہی ہیں جن کو ایک ہی گروپ میں رکھا گیا ہے۔ گروپ میں پہلی4 ٹیمیں سیمی فائنل کھیلنے کی حقدار بنیں گی۔ٹیسٹ کا درجہ رکھنے والی زمبابوے اور آئیر لینڈ کو اس عالمی کپ میں جگہ نہیں ملی۔ انگلینڈ میں5ویں مرتبہ عالمی کپ ہو رہا ہے۔
پہلا عالمی کپ:
انگلینڈ میں پہلا عالمی کپ 1975 میں7 سے 21 جون تک کھیلا گیا تھا جس میں8 ٹیموں نے شرکت کی تھی۔ ٹیسٹ کا درجہ رکھنے والی6 ٹیموں کے علاوہ سری لنکا اورجنوبی افریقاکو اس عالمی کپ میں کھیلنے کا موقع ملا تھا۔
ان8 ٹیموں کو2 گروپوں میں تقسیم کیا گیا تھا۔ گروپ اے میں میزبان نگلینڈ کے علاوہ نیوزی لینڈ،بھارت اور جنوبی افریقا کو رکھا گیا تھا جبکہ گروپ بی میں ویسٹ انڈیز، آسڑیلیا، پاکستان اور سری لنکا کو جگہ ملی تھی۔گروپ اے سے میزبان نگلینڈ اور نیوزی لینڈ نے اور گروپ بی سے ویسٹ انڈیزاورآسڑیلیا سیمی فائنل میں پہنچی تھیں ۔
پہلے سیمی فائنل میں جو ہیڈنگلے، لیڈز پر18 جون کو کھیلا گیا، آسڑیلیا نے انگلینڈ کو 4 وکٹ سے ہراکر فائنل کھیلنے کا اعزاز حاصل کیا۔ پہلے بلے بازی کرتے ہوئے انگلینڈ کے تمام کھلاڑی 36.2 اوور میں93 رنز بناکر آئوٹ ہوئے۔ آسڑیلیا نے28.4 اوور میں6 وکٹ پر94 رنز بناکر فتحاپنے نام کی۔اسی دن دوسرا سیمی فائنل لندن کے اوول میں کھیلا گیا۔ ویسٹ انڈیز نے نیوزی لینڈ کے خلاف5 وکٹ سے کامیابی اپنے نام کی۔ نیوزی لینڈ نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے52.2 اوور میں158 رنز بنائے تھے۔ ویسٹ انڈیز نے40.1 اوور میں 5 وکٹ پر159 رنز بناکر میچ 5 وکٹ سے جیتا تھا اور فائنل تک رسائی حاصل کی تھا۔
لارڈز کے تاریخی میدان پر21 جون کو کھیلے گئے فائنل میں ویسٹ انڈیز نے آسڑیلیا کو شکست دیکر کرکٹ کے پہلاعالمی چمپیئن ہونے کا اعزاز حاصل کیا۔ٹاس ہارنے کے بعد پہلے بلے بازی کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز نے مقررہ60 اوور میں8وکٹ پر291 رنز بنائے تھے۔ کلائیو لائیڈ نے85 گیندوں پر12 چوکوں اور2 چھکوں کی مدد سے 102 رنز بنائے تھے جسکی وجہ سے ویسٹ انڈیز کا اتنا بڑا اسکور ممکن ہوسکا۔ گیری گلمور نے48 رنز دیکر 5کھلاڑیوں کو آئوٹ کیا۔ آسڑیلیا کے تمام کھلاڑی 58.4 اوور میں274 رنز بناکر آئوٹ ہوئے جسکی وجہ سے ویسٹ انڈیز نے17 رنز سے میچ جیتا اور ٹائٹل پر قبضہ جمایا۔ ایان چیپل نے93 گیندوں پر6 چوکوں کی مدد سے62 رنز بنائے۔ کیتھ بوائز نے50 رنز دیکر 4 کھلاڑیوں کو آئوٹ کیا۔ کلائیو لائیڈ کو مین آف دی میچ ایوارڈ ملا۔ انہوں نے ڈیوک آف ایڈنبرا سے پروڈینشیل عالمی کپ اور 4000 پائونڈ کا چیک بھی حاصل کیا۔
اس عالمی کپ میں15 میچوں میں1573.2 اوور میں208 وکٹوں کے نقصان پر6162 رنز بنے۔ ویسٹ انڈیز نے اتمام 5میچوں میں کامیابی حاصل کی۔
دوسراعالمی کپ:
پہلے عالمی کپ کی طرح دوسرے عالمی کپ جو 1979 میں 9 سے 23 جون کھیلا گیا انگلینڈ نے ہی میزبانی کے فرائض انجام دیے اور پہلا ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم ویسٹ انڈیز نے یہ معرکہ بھی سر کرکے ایک مرتبہ پھر کرکٹ کا بادشاہ بننے کا اعزاز حاصل کیا۔ پہلے فارمیٹ کی طرح اس میں بھی 8 ٹیموں نے شرکت کی ۔ٹیسٹ کا درجہ رکھنے والی6 ٹیموں کے علاوہ سری لنکا اور کنیڈا کو اس عالمی کپ میں کھیلنے کا موقع ملا ۔ان 2 گروپوں میں تقسیم کیا گیا ۔گروپ اے میں میزبان نگلینڈ کے علاوہ پاکستان ، آسٹریلیا اور کنیڈا کو رکھا گیا تھا جبکہ گروپ بی میں ویسٹ انڈیز، نیوزی لینڈ، بھارت اور سری لنکا کو جگہ ملی تھی۔گروپ اے سے میزبان نگلینڈ اورپاکستان نے اور گروپ بی سے ویسٹ انڈیزاور نیوزی لینڈ نے سیمی فائنل میں کھیلنے کا اعزاز حاصل کیا۔ پہلے سیمی فائنل میں جو لندن کے اوول پر20 جون کو کھیلا گیا، ویسٹ انڈیزنے پاکستان کو 43 رنز سے ہراکر دوسری مرتبہ فائنل تک رسائی حاصل کی۔ پہلے بلے بازی کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز نے مقررہ60 اوور میں6 وکٹ پر293 رنز بنائے۔پاکستان کے تمام کھلاڑی 56.2 اوورز میں 250 رنز بناکر آئوٹ ہوئے ۔اسی دن دوسرا سیمی فائنل جواولڈ ٹریفلڈ ، مانچسٹرمیں کھیلا گیا۔انگلینڈ نے نیوزی لینڈ کے خلاف9 رنز سے کامیابی اپنے نام کی۔ انگلینڈ نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے60 اوورز میں8 وکٹ پر221 رنز بنائے تھے۔ نیوزی لینڈ نے60 اوورز میں9 وکٹ پر212 رنز بناکر میچ9 رنز سے گنوادیا۔لارڈز کے تاریخی میدان پر 23 جون کو کھیلیگئے فائنل میں ویسٹ انڈیز نے انگلینڈ کو شکست دیکر لگا تار دوسری مرتبہ عالمی چمپیئن ہونے کا اعزاز حاصل کیا۔ٹاس ہارنے کے بعد پہلے بلے بازی کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز نے مقررہ60 اوور زمیں9 وکٹ پر286 رنز بنائے تھے۔ووین رچرڈز نے157 گیندوں پر11 چوکوں اور3چھکوں کی مدد سے آئوٹ ہوئے بغیر138 رنز بنائے تھے جسکی وجہ سے ویسٹ انڈیز کا اتنا بڑا اسکور ممکن ہوسکا۔ انگلینڈ کے تمام کھلاڑی 51 اوورز میں194 رنز بناکر آئوٹ ہوئے جسکی وجہ سے ویسٹ انڈیز نے92 رنز سے میچ جیتا اوردوسری مرتبہ ٹائٹل پر قبضہ جمایا۔جان بریرلی نے130 گیندوں پر2 چوکوں کی مدد سے64 رنزبنائے۔ جیول گارنر نے38 رنز دیکر 5 کھلاڑیوں کو آئوٹ کیا۔ووین رچرڈز کو مین آف دی میچ ایوارڈ ملا۔ ویسٹ انڈیز کے کپتان کلائیو لائیڈ کو ڈیوک آف ایڈنبرا سے پروڈینشیل عالمی کپ اور 10,000. پائونڈز کا چیک بھی حاصل کیا۔ اس فائنل کو دیکھنے کے لیے 25,000 تماشائیوں نے اسٹیڈیم کا رخ کیا۔
اس عالمی کپ میں14 میچوں میں1457.4 اوورز میں202 وکٹوں کے نقصان پر5168 رنز بنے۔ ویسٹ انڈیز نے تمام 4 میچوں میں کامیابی حاصل کی۔ سری لنکا اور ویسٹ انڈیز کا میچ مکمل طور پر بارش کی نذر ہواتھا