کسی امدادی جہاز کو لنگرانداز نہیں ہونے دیں گے‘ اٹلی

61
روم: تارکین وطن سمندر میں بھٹک رہے ہیں‘ سی واچ کے امدادی کارکن مہاجرین کو بچا کر جہاز کی جانب لے جارہے ہیں
روم: تارکین وطن سمندر میں بھٹک رہے ہیں‘ سی واچ کے امدادی کارکن مہاجرین کو بچا کر جہاز کی جانب لے جارہے ہیں

روم (انٹرنیشنل ڈیسک) اطالوی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ 65 مہاجرین کو بچانے والے امدادی بحری جہاز کو اٹلی میں لنگر انداز نہیں ہونے دیا جائے گا۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق مہاجرین مخالف اطالوی وزیر داخلہ ماتیو سالوینی نے اس حوالے سے باقاعدہ ایک حکم نامہ جاری کر دیا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ مہاجرین کو بچانے والا کوئی بھی بحری جہاز یا کشتی اطالوی سمندری حدود میں داخل نہیں ہو سکتے۔ جرمن امدادی ادارے کے مطابق سی واچ تھری نامی بحری جہاز نے لیبیا کے ساحلوں کے قریب مہاجرین سے بھری 3 کشتیوں کو ڈوبنے سے بچا لیا۔ دوسری جانب جرمنی کے شہر فیورسٹن فیلڈ بروک میں قائم رفیوجی پروسیسنگ سینٹر میں رہنے والے تارکین وطن کا کہنا ہے کہ ،ہاجر مرکز میں گنجایش سے زیادہ افراد کو رکھا گیا ہے جبکہ سیاسی پناہ کے پیچیدہ اور مشکل عمل کی وجہ سے ایک مہاجر نے خودکشی کی کوشش بھی کی۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق جرمنی میں کئی رفیوجی پروسیسنگ سینٹر قائم کیے گئے ہیں۔ فیورسٹن فیلڈ بروک نامی مرکز کے مہاجرین نے ڈی ڈبلیو کو بتایا ہے کہ انہیں غیرانسانی حالات میں رکھا جا رہا ہے جہاں انہیں مناسب طبی سہولیات کی فراہمی کے لیے بھی شدید تگ و دو کرنا پڑتی ہے جب کہ ان کی سیاسی پناہ کی درخواستیں دفتری راہداریوں میں پھنس کر رہ گئی ہیں۔ میونخ کے مضافات میں واقع اس مرکز کے مہاجرین نے نام خفیہ رکھنے کی شرط پر اندرونی حالات کی تفصیلات بتائی ہیں۔ انہوں نے خوف کا اظہار کیا کہ ان کا نام سامنے آنے کی وجہ سے انہیں انتظامیہ کی جانب سے مسائل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے یا پھر ان کی سیاسی پناہ کی درخواستوں کی راہ میں مزید رکاوٹیں کھڑی کی جا سکتی ہیں۔