یمنی فوج کا 97 باغی ہلاک اور 120گرفتار کرنے کا دعویٰ

54

صنعا (انٹرنیشنل ڈیسک) یمن میں سرکاری فوج اور ان کی حامی ملیشیاؤں نے بدھ کے روز حوثی ملیشیا کو الضالع صوبے کے شمال میں واقع شہر قعطبہ سے باہر نکال دیا۔ عرب ذرائع ابلاغ کے مطابق یہ پیش رفت شدید لڑائی کے بعد سامنے آئی، اس دوران حوثیوں کے 97 جنگجو مارے گئے اور 120 کو حراست میں لے لیا گیا جن میں کئی کمانڈر بھی شامل ہیں۔ یمنی فوج نے قعطبہ کے مغربی علاقے میں حوثیوں کے ٹھکانوں پر اچانک حملہ کیا۔ اس حوالے سے حوثیوں کی کئی عسکری گاڑیاں تباہ کرنے کا دعویٰ بھی کیا گیا ہے۔ یمنی فوج کی اسپیشل فورسز شہرکے دیگر علاقوں کو محفوظ بنانے اور حوثی ملیشیا کے باقی عناصر کی تلاش میں مصروف ہیں۔ قبل ازیں اتوار کے روز الضالع صوبے کے شمال میں یمنی فوج کے ساتھ جھڑپوں میں تقریباً 40 حوثی ہلاک ہو گئے تھے۔ مارے جانے والوں میں کئی رہ نما بھی شامل تھے۔ یہ لڑائی قعطبہ کے جنوبی علاقے کے علاوہ نقیل الشیم، حمران السادہ اور العباری کے علاقے میں ہوئی۔ اس دوران یمنی فوج نے حوثیوں کے ٹھکانوں پر بم باری کی۔اسی طرح دمت شہر میں عینی شاہدین نے بتایا کہ مریس سے 20 حوثی ارکان کی لاشیں دمت پہنچائی گئی ہیں۔ دریں اثنا زمار شہر میں حوثی ملیشیا نے یمنی وزیر دفاع محمد علی المقدشی کے والد شیخ علی احمد صلاح المقدشی کا گھر دھماکے سے اڑا دیا۔