بے قابو مہنگائی بلوچستان میں اپوزیشن جماعتوں کا جمعے کو ہڑتال کا اعلان

51

کوئٹہ (نمائندہ جسارت) بلوچستان کی اپوزیشن جماعتوں نے مہنگائی کے خلاف 17 مئی کو شٹر ڈاؤن ہڑتال کی کال دے دی، اپوزیشن لیڈر کہتے ہیں رواں مالی سال کے بجٹ کا 80 فیصد استعمال نہیں ہوسکا۔ بلوچستان اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر ملک سکندر ایڈووکیٹ نے دیگر اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ بارہا آواز اٹھائی کہ بلوچستان کا بجٹ ضائع ہورہا ہے مگر حکومت نہیں ایک نہ سنی اور اب رواں مالی سال کا 80 فیصد بجٹ ضائعہوگیا جس سے بلوچستان کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا ہے، انہوں نے کہا کہ صدر اور وزیراعظم کوئٹہ آئے مگر ایک روپے کے پیکج کا بھی اعلان نہیں کیا، صوبے میں امن و امان کی صورتحال بھی دن بدن خراب ہوتی جارہی ہے، گوادر ہوٹل واقعے سے سرمایہ کاری رک جائے گی، ایسے حملوں سے سی پیک منصوبہ بھی خطرے میں پڑ سکتا ہے، اپوزیشن لیڈر کا کہنا تھا کہ بجلی گیس کے بل اتنے بڑھ گئے کہ عام آدمی کے لیے ادا کرنا ممکن نہیں رہے، پیٹرول اتنا مہنگا ہوگیا ہے کہ لوگ واپس سائیکل چلانے پر مجبور ہو جائیں گے، خدشہ ہے کہ آئندہ بجٹ میں بھی کوئی ریلیف عوام کو نہیں ملے گا، 17 مئی کو مہنگائی اور بجٹ ضائع ہونے کے خلاف کوئٹہ میں شٹر ڈاؤن ہڑتال کی جائے گی، بی این پی مینگل سے تعلق رکھنے والے اپوزیشن رکن نصیر شاہوانی نے کہا کہ حکومت کی نااہلی ہے کہ وہ سابق ادوار کی روایت دوہرا رہی ہے، حکومت کی ہٹ دھرمی جاری رہی تو احتجاج کو مزید بڑھائیں گے۔ رکن اسمبلی نصراللہ زیرے نے کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت ملک کی نااہل ترین حکومت ہے، صوبے میں ترقی کا پہیہ جام ہوکر رہ گیا ہے، ایک جانب مہنگائی ہے تو دوسری جانب دہشت گردی کے واقعات ہورہے ہیں۔