خیرپور قبرستان کی نماز جنازہ گاہ پر قبضہ علاقہ مکینوں کا شدید احتجاج

54

خیرپور (نمائندہ جسارت) درگاہ پیر سید فضل شاہ بخاری اور درگاہ پیر سید جندل شاہ بخاری قبرستان کی نماز جنازہ گاہ پر قبضہ۔ مکان تعمیر، علاقہ مکینوں کا احتجاجی مظاہرہ، واگزار کرانے کا مطالبہ۔ سابق کونسلر حاکم جت، منظور ٹانوری، نثار نائچ، ذوالفقار علی برڑو، آصف علی نائچ، سید راجا سلیم ودیگر کی قیادت میں درگاہ سید جندل شاہ بخاری قبرستان کے نمازی جنازہ گاہ پر قبضہ کیخلاف احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے انہوں نے قدیمی جنازہ گاہ پر مافیا نے مکان تعمیر کرکے قبضہ کرلیا ہے۔ قبضہ مافیا کی سرگرمیوں نے شہریوں میں خوف وہراس پھیلا دیا ہے۔ مظاہرین نے بتایا کہ قبضہ مافیا کی جانب سے سنگین نتائج کی دھمکیوں کے بعد علاقہ مکینوں میں سخت اشتعال پھیلنے لگا تو ایسے میں تھانہ بی سیکشن انچارج عبدالمالک بھٹو، اے ایس آئی طالب جسکانی، لقمان پولیس چوکی سفیر جمانی کی قیادت میں پولیس کی بھاری نفری کے ہمراہ درگاہ سید جندل شاہ بخاری قبرستان پہنچ گئے اور حالات پر قابو پایا اور مظاہرین کو تھانیدار نے جنازہ گاہ پر تعمیر مکان کو مسمار کراکے واگزار کرانے کی یقین دہانی پر مظاہرہ ختم کیا گیا۔ دوسری جانب خیرپور کے بیگم نصرت بھٹو سیکرٹریٹ بلڈنگ ون یونٹ عمارت سے متصل قدیمی درگاہ پیر سید فضل شاہ بخاری قبرستان کی قبروں کو قبضہ مافیا نے مسمار کرکے وہاں پر اپنے گھر تعمیر کرلیے ہیں اور اپنے گھروں کا گندا پانی کی نکاسی قبرستان میںکرنے سے قبروں کے تقدس کی پامالی بھی کی جارہی ہے کیخلاف درگاہ پیر سید فضل شاہ بخاری کے خدمت گاروں عبدالستار لاشاری، سلیم رضا شیخ، صوفی اسحاق سومرو، عاشق لاشاری، الطاف گوپانگ، وحید ابڑو، استاد کوثر، ماسٹر احسان ابڑو، نواز چانڈیو، عابد علی کاکڑ پٹھان، ذوالفقار علی منگریو، قدیر بروہی، امید علی شیخ کی قیادت میں احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے انہوں نے چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ، آئی جی سندھ، وزیر اعلیٰ سندھ، ڈی آئی جی سکھر، ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج خیرپور، ایس ایس پی خیرپور، ڈپٹی کمشنر خیرپور سے اپیل کی ہے کہ درگاہ پیر سید فضل شاہ بخاری اور درگاہ پیر سید جندل شاہ بخاری قبرستانوں پر قبضہ مافیا سے واگزار کرائی جائے تاکہ زائرین کو پریشانی تکلیف سے نجات مل سکے۔