سینیٹ ::سی ایس ایس کا امتحان اردو میں بھی لینے کی سراج الحق کی قرار داد منظور

67

اسلام آباد(صباح نیوز) سینیٹ میںجماعت اسلامی کی سی ایس ایس کاامتحان انگزیزی کے ساتھ ارود میں لینے کی قراردادمنظور کرلی گئی ۔سینیٹ میں خطاب کرتے ہوئے امیرجماعت اسلامی پاکستان سینیٹرسراج الحق نے کہاکہ جب تک اردوکوسرکاری زبان کی حیثیت نہیں دی جاتی ملک ترقی نہیں کرسکتاہے۔ ہرملک نے قومی زبان میں تعلیم کی وجہ سے ترقی کی۔ پیرکوسینیٹ کااجلاس چیئر مین سینیٹ صادق سنجرانی کی صدرات میں ہوا۔ سینیٹر سراج الحق نے قرارداد پیش کی کہ یہ ایوان سفارش کرتاہے کہ اعلیٰ ترین مرکزی ملازمتوں سی ایس ایس کا امتحان انگریزی کے بجائے قومی زبان اردو میں لیاجائے۔وزیر مملکت علی محمد خان نے کہاکہ قرارداد کی مخالفت کرتاہوں اس میں مسائل ہیں۔ ہائر ایجوکیشن کمیشن نے اردو کی مخالفت کی تھی۔ صرف 5فیصد امید وار لازمی انگلش پاس کرتے ہیں ۔پیپلز پارٹی کی سینیٹر سسی پلیجو نے قرارداد کی مخالفت کرتے ہوئے کہاکہ انگلش اہم زبان ہے۔ امیرجماعت سلامی پاکستان سینیٹرسراج الحق نے کہاکہ آئین کو ایوان نے بنایاہے اور اس میں لکھاہے کہ 15سال کے اندرملک کے اندر سرکاری زبان اردو کی جائے گی، مگر 45سال گزرگئے لیکن عمل نہیں ہوا ،حکومت اس پر عمل کرے عدالت نے بھی حکم دیا ہے۔ دنیا میں ہر ملک نے اپنی زبان میں ترقی کی ہے۔ ایک ملک دنیا میں ایسا نہیں ہے جس نے اپنی زبان چھوڑی ہواورترقی کی ہو ۔زبان قومی پہچان اور کلچر کا حصہ ہے، اردو ہر جگہ بولی جاتی ہے، ایک قوم بنناہے تو قومی زبان کو سرکاری حیثیت دینی ہوگی، یہ قائداعظم کاوژن ہے، جب ہمارے بچے انگلش چینی اور عربی زبان سیکھیں گے توہم ترقی کس طرح کرسکیں گے ۔ مقابلے کے امتحان میں اردو کوشامل کیاجائے ،جو بھی انگریزی نہیں جانتا اس کو ان پڑھ سمجھاجاتاہے۔ ہم آئی ایم ایف یا ورلڈ بینک کے غلام نہیں ،اگر پاکستان میں اردو کو اہمیت نہیں دیں گے تو کیا افغانستان ، ایران اور دیگر ممالک دیں گے، انگریز نے فارسی زبا ن کے خلاف سازش کی، مقابلے کے امتحانات میں اردو کوشامل کیا جائے تاکہ ایک قوم بن سکیں۔قراردادمیں ترمیم کر کے اس کو انگریزی کے ساتھ اردومیں سی ایس ایس کاامتحان لیاجائے کردیاگیاجس پر انگریزی کے ساتھ اردو میں بھی سی ایس ایس کا امتحان لیاجائے کی قرارداد متفقہ طور پر پاس ہوگئی۔