تحریک انصاف نے کنٹینر انتشار پھیلانے کیلئے استعمال کیا،مرتضیٰ وہاب

148
کراچی: مشیر اطلاعات سندھ مرتضی وہاب این آئی سی وی ڈی کے تحت کریم آباد میں چیسٹ پین یونٹ کے افتتاح کے بعدمیڈیا سے گفتگو کررہے ہیں
کراچی: مشیر اطلاعات سندھ مرتضی وہاب این آئی سی وی ڈی کے تحت کریم آباد میں چیسٹ پین یونٹ کے افتتاح کے بعدمیڈیا سے گفتگو کررہے ہیں

کراچی (اسٹاف رپورٹر) وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر اطلاعات و قانون اور اینٹی کرپشن بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ تحریک انصاف نے اپنا کنٹینر سیاست اور ملک میں انتشار پھیلانے کے لیے استعمال کیا جب کہ پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت اپنے کنٹینرز کو لوگوں کی زندگیاں بچانے اور خدمت کے لیے استعمال کر رہی ہے‘ وفاقی حکومت کو پیشکش کرتا ہوں کہ وہ سندھ حکومت کی خدمات سے فائدہ اٹھائے تاکہ نیشنل انسٹیٹیوٹ آف کارڈیو ویسکیولر ڈیزیزز (این آئی سی وی ڈی) جیسے دل کے اسپتال پورے ملک میں قائم کیے جا سکیں اور پورے ملک کے عوام دل کی بہترین طبی سہولیات سے مستفید ہو سکیں‘ کے ایم سی سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ اپنا کراچی انسٹی ٹیوٹ آف ہارٹ ڈیزیزز سندھ حکومت کے حوالے کرے تاکہ ڈسٹرکٹ سینٹرل کے عوام کو بھی دل کے علاج کی بہترین سہولیات مہیا کی جا سکیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کریم آباد فلائی اوور کے نیچے این آئی سی وی ڈی کے نویں چیسٹ پین یونٹ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر ایگزیکٹیو ڈائریکٹر این آئی سی وی ڈی پروفیسر ندیم قمر، اسپتال کے ایڈمنسٹریٹر ڈاکٹر ملک حمید اللہ، چیف آپریٹنگ آفیسر عذرا مقصود، این آئی سی وی ڈی ویلفیئر ٹرسٹ کے ٹرسٹی امین ہاشوانی، پی ٹی آئی کے ایم این اے اسلم خان، ایم پی اے عمر عماری اور دیگر بھی موجود تھے۔ بیرسٹر مرتضیٰ وہاب کا کہنا تھا کہ اگرچہ کراچی کے لوگوں نے پیپلز پارٹی کو ووٹ نہیں دیا لیکن سندھ حکومت ان کی خدمت جاری رکھے گی اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری ہمیشہ ان کے ساتھ رہیں گے۔ علاوہ ازیں پاکستان یونین آف جرنلسٹس کاسالانہ اجلاس جو کہ کراچی یونین آف جرنلسٹس کے اشتراک سے منعقد ہوا‘ اس میں بحیثیت مہمانِ خصوصی خطاب کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر اطلاعات و قانون اور اینٹی کرپشن بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ اظہار رائے کی آزادی بنیادی انسانی حقوق میں سے ایک ہے اس کی بندش جمہوری روایات کے خلاف ہے‘ اخبارات کے واجبات کی ادائیگی اگلے چند ہفتوں میں کردی جائے گی‘ صحافیوں کو تنخواہوں کی عدم ادائیگی کی وجہ سے معاشی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت ایسا مکینیزم تیار کر رہی ہے جس میں وزیراعلیٰ کی انسپکشن ٹیم اخبارات کے واجبات کی ادائیگی کو اخباری صنعت میں کام کرنے والے ملازمین کی تنخواہوں کی ادائیگی سے مشروط کرے گی جس کے باعث اخبارات کے مالکان ملازمین کو نوکری سے فارغ کرنے کا فیصلہ نہیں کرسکیں گے اور اس طرح اخباری ملازمین پر بے روزگاری کی تلوار بھی نہیں لٹکے گی۔ انہوں نے کہا کہ اخبارات کے پچھلے واجبات کی ادائیگی کے ساتھ رواں گوشواروں کو بھی توازن میں رکھا جائے گا تاکہ ملازمین کو ہرماہ تنخواہوں کی ادائیگی میں پریشانی نہ ہو۔ مشیر اطلاعات سندھ نے مزید کہا کہ کچھ صحافیوں کی گرفتاری کے بارے میں اطلاعات موصول ہوئی ہیں اور میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ ان کے خلاف مقدمات میں بھرپور انصاف کیا جائے گا اور اگر ان پر کسی قسم کا کوئی الزام ہو تو اس کا فیصلہ کرنے کا اختیار عدالت کو ہے۔ کراچی یونین آف جرنلسٹس کے عہدیداران جی ایم جمالی، عاجز جمالی، اقتدار انور نے شاہ زیب جیلانی، مشتاق سرکی اور ان کے بھائیوں کے خلاف درج مقدمات کے بارے میں صوبائی مشیر کو مفصل آگاہی دی۔ جس پر صوبائی مشیر نے کہا کہ صحافیوں کو ان کی مشکلات سے نجات دلانے کی بھرپور کوشش کرے گی جس پر کراچی یونین آف جرنلسٹس کے عہدیداران نے ان کا شکریہ ادا کیا۔ صوبائی مشیر اطلاعات کو عہدیداران نے سندھ کی روایتی اجرک اور ٹوپی کا تحفے میں پیش کیا۔