مطالبات کی منظوری کیلیے گسٹا کا پریس کلب کے باہر احتجاج

95
گورنمنٹ سیکنڈری ٹیچرز ایسوسی ایشن سندھ کے اساتذہ سندھ اسمبلی کی جانب بڑھ رہے ہیں
گورنمنٹ سیکنڈری ٹیچرز ایسوسی ایشن سندھ کے اساتذہ سندھ اسمبلی کی جانب بڑھ رہے ہیں

کراچی ( اسٹاف رپورٹر )گورنمنٹ سکینڈری ٹیچرز ایسوسی ایشن (گسٹا ) نے چارٹر آف ڈیمانڈ کی منظوری کیلیے دوسرے مرحلے میں جمعرات کو کراچی پریس کلب کے سامنے بھر پور احتجاج کیااور سندھ اسمبلی تک مارچ بھی کیااور سندھ اسمبلی کے سامنے علامتی دھرنا بھی دیا ۔ تفصیلات کے مطابق گورنمنٹ سیکنڈری ٹیچرز ایسو سی ایشن سندھ کے مرکزی صدر گسٹا سندھ حاجی محمد اشرف خاصخیلی کی قیادت میں کراچی کے 6اضلاع کے ذمے داروں کے ہمراہ کراچی پریس کلب پر بھر پور احتجاج مظاہرہ کیا ۔ سال 2012ء کے اساتذہ کی نمائندگی ٹیچرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین ظہیر بلوچ اور افضل کوریجو نے کی۔اس موقع پر اساتذہ نے پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جس میں سال2012ء کے اساتذہ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کو تنخواہیں جاری کرو ،اور دیگر نعرے درج تھے۔ اس موقع پر گسٹا سندھ حاجی محمد اشرف خاصخیلی جنرل سیکرٹری اقبال احمد پنہور اور دیگر مقررین نے دو احتجاج کے باوجود جائز مطالبات تسلیم نہ کرنے اور حکومتی ہٹ دھرمی کے خلاف28مارچ کو سندھ بھر کے اضلاع کے اساتذہ کے ساتھ وزیر اعلیٰ ہاؤس پر دھرنے دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ اساتذہ کے پر امن احتجا ج کو سبوتاژ کرنے کی کوشش کی گئی تو دمام دم مست قلندر ہو گا ۔ سندھ کے دیگر اضلاع میں 2012ء میں بھرتی کیے گئے اساتذہ کو تنخواہیں اب بھی ادا کی جاری ہیں جبکہ کراچی سمیت چند اضلاع میں 2012ء کے مختلف کیڈر کے اساتذہ اور نان ٹیچنگ اسٹاف 7برس سے تنخواہوں سے محروم ہیں۔