منی لانڈرنگ کی روک تھام کیلیے اقدامات تیز کیے جائیں،وزیراعظم عمران خان

101
اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان انسداد منی لانڈرنگ کے حوالے سے اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کررہے ہیں
اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان انسداد منی لانڈرنگ کے حوالے سے اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کررہے ہیں

اسلام آباد (نمائندہ جسارت،اے پی پی،آن لائن) حکومت پاکستان نے منی لانڈرنگ میں ملوث افراد کو قانون کے کٹہرے میں لانے کے لیے اینٹی منی لانڈرنگ میں اینٹی ٹیررازم ایکٹ بھی شامل کرنے کا فیصلہ کرلیا۔ اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترمیم کرکے سزا دس سال تک جبکہ جرمانہ بڑھا کر پچاس لاکھ کردیا جائے گا۔ ایف آئی اے کیجانب سے 131کیسز کا اندراج ہوا جس میں 423.304ملین روپے ضبط کیے گئے اور 198افراد کو گرفتار کیا گیا۔کرپٹو کرنسی سے متعلقہ انکوائریز میں تقریبا 540ملین روپوں کی رقوم کا تحقیقات کی جا رہی ہیں جب کہ کسٹم کے حوالے سے نومبر 2018سے فروری2019تک 314ملین روپے کی کرنسی و دیگر مال ضبط کیا گیا ۔ بدھ کو وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت منی لانڈرنگ کی روک تھام کے سلسلے میں اٹھائے جانے والے قانونی اور انتظامی اقدامات اور اب تک ہونے والی کامیابیوں پر اعلی سطح کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں وزیرِ خزانہ اسد عمر، وزیرِ اطلاعات چودھری فواد حسین، وزیرِ قانون فروغ نسیم،وزیرِ مملکت برائے داخلہ شہریار خان آفریدی ، ترجمان ندیم افضل چن، سیکرٹری داخلہ، ڈی جی ایف آئی اے، چیئرمین ایف بی آر اور دیگر سینئر افسران نے شرکت کی۔اس موقع پر وزیر اعظم نے منی لانڈرنگ کے خلاف اقدامات مزید تیز کرنے کی ہدایت کی ۔علاوہ ازیں وزیراعظم عمران خان سے پاکستان کی سکھ اور ہندو کمیونٹی کے نمائندوں نے بدھ کو وزیر اعظم آفس میں ملاقات کی ۔ ملاقات میں ڈاکٹر رمیش کمار ، سردار منندر پال سنگھ ، سردار تارا سنگھ اور روی کمار شامل تھے ۔ وفاقی وزیر مذہبی امور نور الحق قادری بھی ملاقات میں موجود تھے ۔ ملاقات کا مقصد وزیراعظم کے اقلیتی برادری ، متروکہ املاک کے حوالے سے ویژن پر سکھ اور ہندو کمیونٹی کے نمائندوں کو مشاورتی عمل میں اعتماد میں لینا تھا ۔ اس ضمن میں وزیراعظم نے سکھ اور ہندو کمیونٹی کے نمائندوں کو اب تک کے حکومتی فیصلوں کے بارے میں آگاہ کیا اور ان سے مختلف تجاویز پر گفتگو کی ۔ وزیراعظم نے کہاکہ ماضی میں متروکہ وقف املاک بورڈ میں جو کرپشن ہوئی اس کا فوری خاتمہ کرنے کے لیے ایک ٹاسک فورس تشکیل دی جا رہی ہے جو متروکہ وقف املاک بورڈ کو ری اسٹرکچر کرنے کے لیے اپنی سفارشات حکومت کو دے گی تاکہ اس ادارے میں کرپشن کا سد باب کیا جا سکے اور Shrines کی مناسب دیکھ بھال کی جا سکے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہاکہ اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ اور فلاح و بہبود اولین ترجیحات میں شامل ہے ۔ وزیراعظم نے مزید کہاکہ اس ضمن میں حکومت اقلیتی برادری کی مکمل مشاورت سے بھرپور اقدامات اٹھائے گی ۔ وزیراعظم نے کہا کہ اسلام اقلیتوں کی عبادت گاہوں کی حفاظت کی مکمل ضمانت دیتا ہے ۔دریں اثناء وزیراعظم عمران خان سے اقتصادی تعاون تنظیم (ای سی او) کے سیکرٹری جنرل ڈاکٹر ہادی سیلمان پور نے بدھ کو یہاں ملاقات کی جس میں انہوں نے وزیراعظم کو ای سی او کی سرگرمیوں سے آگاہ کیا اور علاقائی سماجی روابط کے فروغ، تجارت کو آزاد بنانے اور ایک دوسرے سے وسیع تر رابطہ کاری کے لیے اس کی اہمیت کو اجاگر کیا۔ ای سی او کے سیکرٹری جنرل کا یہ اسلام آباد کا پہلا دورہ ہے۔ انہوں نے ای سی او کو متحرک اور فعال بنانے کے سلسلہ میں اپنے خیالات سے وزیراعظم کو آگاہ کرنے کے لیے ملاقات کا موقع دینے پر ان کا شکریہ ادا کیا۔قبل ازیں وزیر اعظم عمران خان سے اسلام آباد سمٹ میں شرکت کرنے والے25 مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے 60سے زیادہ مندوبین نے وزیر اعظم آ فس میں ملاقات کی ۔ ملاقات میں مشیر تجارت عبدالرزاق داد ، وزیر اطلاعات چودھری فواد حسین، چیئرمین بورڈ آف انویسٹمنٹ ہارون شریف بھی موجود تھے۔ وزیر اعظم عمران خان نے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج کا پاکستان یکسر تبدیل ہو چکا ہے۔ نیا پاکستان ایک پرامن اور ابھرتے ہوئے سماجی اور معاشی مواقعوں سے بھرپور پاکستان ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ معروف بین الاقوامی سرمایہ کار آج پاکستان میں سرمایہ کاری کر رہے ہیں جو حکومت کی سرمایہ کار دوست پالیسیوں اور کاروبار کرنے میں آسانیاں اورسہولیات میں بہتری کا مظہر ہے۔ موجودہ حکومت سرمایہ کاروں اور کاروباری برادری کو منافع بخش کاروبار کے مواقع فراہم کرنے اور منافع بنانے پر یقین رکھتی ہے ۔ کاروباری برادری کے منافع بنانے سے کاروباری عمل میں تیزی آئے گی جس سے روزگار کے مواقع میسر ہوں گے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ مختلف ممالک سے مندوبین کا اسلام آباد سمٹ میں شرکت اور اسلام آباد میں اس کانفرنس کا انعقاد اس بات کا مظہر ہے کہ بین الاقوامی سرمایہ کاروں کا پاکستان پر اعتماد نہ صرف بحال ہو چکا ہے بلکہ وہ پاکستان کے مختلف سیکٹرز میں سرمایہ کاری کے لیے راغب ہو رہے ہیں۔دوسری جانب وزیر اعظم عمرا ن خان سے پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما سیف اللہ نیا زی نے ملا قات کی جس میں پا رٹی کو مزید فعال کرنے اور چاروں صوبوں میں منعظم کر نے پر تبادلہ خیا ل کیا گیا ۔ وزیر اعظم عمران خان نے سیف اللہ نیازی کو پاکستان تحریک انصاف کا چیف آرگنائزر مقرر کر دیا جس کا باقاعدہ نوٹی فکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے۔