مسئلہ کشمیر مسلم پارلیمانی یونین کانفرنس کے ایجنڈے میں شامل

165

اسلام آباد (صباح نیوز+نمائندہ جسارت) پاکستان مسلم ممالک کی پارلیمانی یونین کانفرنس کے ایجنڈے میں مسئلہ کشمیر کو شامل کرانے میں کامیاب ہوگیا۔مراکش کے شہر رباط میں پارلیمانی یونین کانفرنس کا اجلاس شروع ہوگیا ہے جو 14مارچ تک جاری رہے گا جس میں لگ بھگ 54اسلامی ممالک کے پارلیمانی وفود شریک ہو رہے ہیں ۔کانفرنس میں پاکستانی وفد کی قیادت خصوصی کشمیر کمیٹی کے چیئرمین سید فخر امام کر رہے ہیں ۔ پاکستانی پارلیمانی وفد کو یہ ہدایات دی گئی ہیں کہ وہ کانفرنس میں شر یک مسلم ممالک کے وفود سے ملاقاتیں کر کے بھارت جنگی عزائم اور پاکستانی سر حدوں کی خلاف ورزی سمیت خطے میں امن کو تباہ کرنے کے لیے بھارتی جنون کے حوالے سے آگاہ کریں ۔کانفرنس کے ایجنڈے میں الگ الگ 2 قراردادیں بھی شامل کی گئی ہیں ۔ جس میں کہا گیا ہے کہ مقبوضہ اور متنازع علاقوں میں مسلمان خواتین اور بچوں پر جو ظلم و تشدد ہو رہا ہے اسے روکا جائے۔پاکستانی پارلیمانی وفد امت مسلمہ پر یہ بھی واضح کرے گا کہ مقبوضہ کشمیر کے مسئلے کو حل کیے بغیر خطے میں امن قائم نہیں ہو سکتا جس کی وجہ سے بین الاقوامی صورتحال بھی متاثر ہونے کے خدشات موجودہیں۔ ادھر پاکستانی دفترخارجہ کے ترجمان ڈاکٹر فیصل نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ بھارتی حکومت اور بھارتی میڈیا عالمی برادری کو گمراہ کرنے کے لیے غلط معلومات پھیلانا بند کرے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت اپنی ناکامی اور شرمندگی چھپانے اور مقامی سیاسی فوائد کے لیے جھوٹا پروپیگنڈا کر رہا ہے۔ترجمان کا کہنا تھا کہ نیشنل ایکشن پلان کے تحت انتہاپسندی کو جڑ سے اکھاڑنے کی کوششیں جاری ہیں۔ ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ پاکستان حق خودارادیت کے لیے مقبوضہ کشمیر کے عوام کی جائز جدوجہد کی مکمل حمایت کرتا ہے، بھارت انسداد دہشت گردی کے اقدامات کے نام پر کشمیریوں کی جدو جہد آزادی کو دبا رہا ہے۔