ادارہ ترقیات کراچی میں کروڑوں کے ٹھیکوں کی بندر بانٹ ،

135

کراچی(اسٹاف رپورٹر)کے ڈی اے محکمہ انجینئرنگ کے بدعنوانیوں میں ماہر افسران نے50کروڑ سے زائد لاگت کی5ترقیاتی اسکیمیں انتہائی مہارت سے ٹھکانے لگادیں،اوپن ہونے والے ٹینڈرز میں بڑی تعداد میں کنٹریکٹرز نے حصہ لیا تھا، کروڑوں کے ٹھیکے چور دروازے سے فروخت میں ناکامی پر افسران نے اسکروٹنی کے نام پر چہیتے کنٹریکٹرز کو نواز دیا،

ٹھیکیداروں کی نمائندہ تنظیم کراچی کنٹریکٹرز ایسوسی ایشن نے ادارہ ترقیات کراچی میں کروڑوں کے ٹھیکوں کی بندر بانٹ پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے کراچی کی ترقی کے خلاف سازش قرار دیدیا،کراچی کنٹریکٹرز ایسوسی ایشن نے کے ڈی اے افسران کی بدعنوانیوں کیخلاف سیپرا کو صورتحال سے آگاہ کرنے کے ساتھ ساتھ تحقیقاتی اداروں کو بھی خطوط ارسال کردیئے۔

تفصیلات کے مطابق ادارہ ترقیات کراچی میں ایک مرتبہ پھر50 کروڑ سے زائد لاگت کے ترقیاتی کاموں کو مبینہ بھاری نذرانوں کے عیوض ٹھکانے لگائے جانے کا انکشاف ہوا ہے،

ذرائع کا کہناہے کہ مذکورہ 5ترقیاتی اسکیموں میں کلفٹن بیچ،منوڑہ،لانڈھی کوٹل چورنگی پر پارک کی تعمیر کے علاوہ ضلع غربی کی اندرونی سڑکوں کی تعمیر کے کام شامل تھے جو کہ13فروری کو اوپن کئے گئے ،ذرائع کا کہنا ہے کہ اسپیشل ڈیولپمنٹ پروگرام کے مذکورہ کاموں کو ایگزیکیوٹ کے ڈی اے سے کرایا جارہا ہے،

ذرائع کا کہنا ہے کہ مذکورہ کاموں کی لاگت 50کروڑ روپے سے زائد ہے جس کیلئے کنٹریکٹرز نے بڑی تعداد میں اپنے ٹینڈرز جمع کرائے تھے،کے ڈی اے ذرائع کا کہنا ہے کہ افسران نے پہلے چور دروازے سے مذکورہ کام فروخت کرنے کی کوشش کی تاہم اس میں ناکامی پر لوٹ مار کیلئے بنایا گیا فارمولہ نمبر 2کے تحت ٹینڈرز اوپن کر کے سب کو مطمئن کردیا گیا تاہم بعدازاں اسکروٹنی کے نام پر چہیتے ٹھیکیداروں سے مک مکا کر کے انہیں کامیاب قرار دیدیا گیا ہے،

مذکورہ ٹینڈر کی بڈایلویشن جاری کئے جانے پر کراچی کے کنٹریکٹرز نے سنگین بدعنوانیوں پر اپنے سر پکڑ لئے ہیں،ٹھیکیداروں کا کہنا ہے کہ اسکروٹنی کے ذریعے من پسند کنٹریکٹرز کو مبینہ جعلسازی کے ذریعے کامیاب بنایا گیا اورچوتھے نمبر پر آنے والے ٹھیکیداروں کو لوئسٹ بنادیا گیا ہے،

اس سلسلے میں ٹھیکیداروں کی نمائندہ تنظیم کراچی کنٹریکٹرز ایسوسی ایشن نے کے ڈی اے افسران پر سنگین نوعیت کی کرپشن اور بدعنوانیوں کے الزامات عائد کرتے ہوئے کے ڈی اے افسران کو بدعنوانیوں اور جعلسازیوں میں ماہر قرار دیدیا ہے،

کراچی کنٹریکٹرز ایسوسی ایشن کے عہدیداروں کا اس سلسلے چیئرمین نعیم کاظمی کی صدارت میں منعقد ہوا جس میں جنرل سیکریٹری عبدالرحمن،فنانس سیکریٹری اشفاق شیروانی،انفارمیشن سیکریٹری سعید مغل کے علاوہ دیگر عہدیداروں سے شرکت کی،

اجلاس میں ترقیاتی کاموں کے ٹھیکوں میں کی جانے والی جعلسازیوں اور چہیتوں کو نوازنے کیلئے قواعد وضوابط کی خلاف ورزیوں پر سیپرا حکام کو لیٹر جاری کیا گیا تاہم بعدازاں کے ڈی اے کے ٹھیکوں میں کی جانے واکی مبینہ بدعنوانیوں پر اعلی تحقیقاتی اداروں کو بھی صورتحال سے آگاہ کرنے اور تحقیقات کیلئے خط ارسال کردیا ہے.