عراق کا داعش کا حملہ حکومتی ملیشیا کے 27 جنگجو ہلاک و زخمی

153
بصرہ: حکومت کی ناقص کارکردگی اور سہولیات کی عدم فراہمی کے خلاف عراقی شہری زرد جیکٹ پہن کرسڑکوں پر آگئے ہیں
بصرہ: حکومت کی ناقص کارکردگی اور سہولیات کی عدم فراہمی کے خلاف عراقی شہری زرد جیکٹ پہن کرسڑکوں پر آگئے ہیں

بغداد (انٹرنیشنل ڈیسک) عراق کے جنوب مشرقی موصل میں دہشت گرد تنظیم داعش کے حملے میں حکومتی ملیشیا حشد الشعبی کے 27 جنگجو ہلاک و زخمی ہو گئے۔ عرب ٹی وی کے مطابق عراقی سیکورٹی حکام کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ داعش کے جنگجوؤں نے جنوب مشرقی موصل میں مخمور اور الدبس کے درمیان گھات لگا کر حملہ کیا جس کے نتیجے میں حشد الشعبی ملیشیا کے 6 جنگجو ہلاک اور 21 زخمی ہوگئے۔ دوسری جانب عراقی صدر برہم صالح نے کہا ہے کہ داعش کے ساتھ تعلق کے الزام میں گرفتار فرانسیسی جنگجوؤں کے خلاف عراق کی عدالتوں میں مقدمات چلائے جائیں گے۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار عبر ٹی وی چینل کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ فرانسیسی داعشی دہشت گردوں نے عراق کی سرزمین پر جرائم کا ارتکاب کیا۔ ان کے خلاف مقدمات بھی عراق ہی کی عدالتوں میں چلائے جائیں گے۔ پولیس نے فرانسیسی شہریت رکھنے والے 13 داعشی دہشت گردوں کو گرفتار کیا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں عراقی صدر نے توقع ظاہر کی کہ پناہ گزینوں کے بحران کے حل کے لیے علاقائی اور عالمی سطح پر بغداد کی مدد کی جائے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ داعش کے خلاف فتح کوئی معمولی بات نہیں۔ عراق پوری دنیا کی طرف سے دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑ رہاہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں عراق اور شام کے درمیان عسکری تعاون موجود ہے۔ عراقی صدر نے تسلیم کیا کہ عراق اور شام کی سرحد پر بعض علاقوں میں داعش کے جنگجو بدستورموجود ہیں۔تنظیم کے مکمل خاتمے اور اسے شکست دینے کے لیے پوری دنیا کو متحد ہونا ہوگا۔