امریکا:بگولوں اور طوفان نے تباہی مچادی ،23 افراد ہلاک

58
الاباما: طاقت ور بگولوں نے مکانات سمیت راستے میں آنے والی ہر شے کو اکھاڑ پھینکا ہے
الاباما: طاقت ور بگولوں نے مکانات سمیت راستے میں آنے والی ہر شے کو اکھاڑ پھینکا ہے

مونٹگمری (انٹرنیشنل ڈیسک) امریکا کی جنوبی ریاست الاباما کے جنوب مشرقی علاقوں میں طوفان اور بگولوں سے کم از کم 23 افراد ہلاک اور کئی زخمی ہو گئے۔ لی کاؤنٹی کے شیرف جے جونز نے بتایا کہ بگولوں کی وجہ سے ایک میل کے علاقے میں تباہی ہوئی ہے، جس کی وجہ سے کئی مکانات اور عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے اور کئی ایک مکان مکمل طور پر زمیں بوس ہو گئے ہیں۔ جب کہ سیکڑوں درخت بھی اکھڑ گئے۔ انہوں نے بتایا کہ کئی زخمیوں کو اسپتالوں میں منتقل کر دیا گیا ہے اور جن میں کئی ایک شدید زخمی ہیں۔ تباہ کن طوفان کی رفتار 254 سے 331 کلومیٹر فی گھنٹہ تھی۔ ہلاک ہونے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔ الاباما ہنگامی سروس کے منتظم ادارے کے ترجمان گریگوری رابنسن نے خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ امدادی کارکن ریاست کے جنوب مغربی علاقے میں ہونے والے نقصانات کا جائزہ لے رہے ہیں۔ اتوار کی دوپہر کو الاباما، جارجیا، فلوریڈا اور جنوبی کیرولینا میں بگولوں کا انتباہ جاری کیا گیا تھا۔ محکمہ موسمیات کے عہدے داروں نے کہا کہ انہوں نے ریڈار کے ذریعے اس علاقے میں دیگر بگولوں کا بھی انتباہ جاری کیا تھا۔ پیر کی صبح کو ان کا جائزہ لینے کے لیے ماہرین کی ٹیم بھیجی۔ ٹیلی ویژن پر نشر ہونے والے مناظر میں تباہ شدہ عمارتیں اور ہر طرف ملبے کے ڈھیر دکھائی دیے، جنہیں ہٹانے کے لیے امدادی کارکن مصروف ہیں۔ صدر ٹرمپ نے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ الاباما اور اس کے نواح کے لوگ احتیاط کریں اور محفوظ رہیں۔ بے گھر ہونے والوں کو ریلیف کیمپ میں پناہ دی گئی ہے۔ 10 ہزار سے زائد افراد بجلی سے محروم ہوئے۔ ریاست جارجیا میں بھی طوفانی جھکڑوں نے بڑے پیمانے پر مالی نقصان پہنچایا۔ فلوریڈا میں بھی صورت حال گمبھیر رہی۔ تیز رفتار ہواؤں نے جنوبی کیلیفورنیا میں بھی تباہی مچائی۔ مسلسل بارش اور تیز ہواؤں کے باعث ان چاروں ریاست میں معمولات زندگی معطل ہیں۔ امریکی محکمہ موسمیات کی جانب شہریوں کو غیر ضروری طور پر گھر سے باہر نہ نکلنے کی ہدایت کی گئی ہے، جب کہ میونسپل کمیٹیوں کی جانب سے ریلیف کیمپ قائم کردیے گئے ہیں۔