پی آئی اے قومی اثاثہ ہے ،بہتری کیلیے شب وروز کام کرنا ہوگا،گورنر 

44
گورنر سندھ عمران اسماعیل سے حبکو کے چیف ایگزیکٹو آفیسر خالد منصور کی سربراہی میں وفد ملاقات کر رہا ہے
گورنر سندھ عمران اسماعیل سے حبکو کے چیف ایگزیکٹو آفیسر خالد منصور کی سربراہی میں وفد ملاقات کر رہا ہے

کراچی ( اسٹاف رپورٹر )گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا ہے کہ پی آئی اے قومی اثاثہ ہے جس کی بہتری کے لیے شب و روز محنت کرنا ہوگی تاکہ اس کے وقار کو بلند کیا جاسکے، ضرورت اس امر کی ہے کہ ائر لائن کے اسٹاف و افسران اپنی تمام تر صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے حکومت کے ساتھ تعاون کریں۔ یہ بات انہوں نے پی آئی اے کے افسران کے 12 رکنی وفد سے گورنر ہاؤس میں ملاقات کے دوران کہی، ملاقات میں رکن صوبائی اسمبلی عدیل احمد بھی موجود تھے۔ انہوں نے مزید کہا قومی ائر لائن کا شمار دنیا کی بہترین ائر لائنوں میں ہوتا تھا‘ موجودہ حکومت پی آئی اے کو مکمل طور پر فعال کرنے کے لیے اقدامات کررہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ پی آئی اے نے متعدد انٹرنیشنل ائر لائنز کو بنایا جوکہ آج بڑے مقام پر ہیں ضرورت اس بات کی ہے کہ قومی ائر لائن کے ساتھ پچھلے دور میں کیے جانے والے ناروا سلوک کا تدارک کیا جائے۔ گورنر سندھ نے کہا کہ وزیر اعظم پاکستان کا ویژن ہے کہ قومی اداروں کو مضبوط او رمستحکم بنایا جائے اس حوالے سے پالیسیوں میں بہتری لائی جارہی ہے اور مختلف اصلاحات پر بھی تیزی سے کام جارہی ہے، تاکہ ائر لائن ملازمین اپنی پوری توجہ ، محنت اور جانفشانی سے کام کرتے ہوئے دوبارہ قومی ائر لائن کو دنیا کی صف اول کی ائرلائنز میں اس کا شمار کراسکیں۔انہوں نے کہا وہ دون دورنہیں جب قومی ائر لائن کو اس کا اصل مقام حاصل ہوجائے گا ، جس کے لیے ملازمین کو اپنی تمام تر توانائی اس پر صرف کرنا ہوگی کیونکہ حکومت ان کو ہرممکن مدد اور تعاون فراہم کرنے کے لیے عملی اقدامات کررہی ہے۔ علاوہ ازیں گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا ہے کہ پینے کے پانی کی دستیابی کراچی کے شہریوں کا ایک بڑا مسئلہ ہے کیونکہ اس کے بغیر روز مرہ امور کی انجام دہی بہت مشکل ہوتی ہے ، اس مسئلہ کو حل کرنا موجودہ حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے اس ضمن میں مختلف منصوبوں پر کام کیا جارہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے حبکوکے چیف ایگزیکٹیو آفیسر خالد منصور کی سربراہی میں آئے ہوئے تین رکنی وفد سے ملاقات میں کیا، ملاقات میں روحیل محمد اور فرخ رشید بھی شریک تھے۔ حبکو کی جانب سے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ حبکو سمندری پانی کو میٹھا کرنے کے 2 منصوبوں اور صنعتی فضلے کو ری سائیکل کرنے کے 2 منصوبوں پر کام کر نا چاہتی ہے جس سے شہر میں کچرے کے باعث پیدا ہونے والے ماحولیاتی مسائل پر قابو پانے میں مدد ملے گی بلکہ کراچی کے شہریوں کو پینے کا صا ف پانی اور صنعتوں کو استعمال کا پانی دستیاب ہوگا۔ خالد منصور نے مزید بتایا کہ صنعتی فضلے کے پلانٹ نصب کرنے کے سلسلے میں صنعتی ایسو سی ایشن کو آگاہی فراہم کی ہے جوکہ ان منصوبوں کی فنڈنگ کے لیے بھی تیار ہیں۔