پی ٹی آئی کے سینئر رہنماء علیم خان آمدن سے زائد اثاثے رکھنے پر گرفتار،وزارت سے مستعفی

136

لاہور (نمائندہ جسارت)قومی احتساب بیورو (نیب)نے تحریک انصاف کے رہنما اورسینئر صوبائی وزیر عبدالعلیم خان کوآمدن سے زائد اثاثے رکھنے پر گرفتار کر لیا ۔صوبائی وزیر نے اپنا استعفا وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کو بھجوا دیا ہے۔نیب ذرائع کے مطابق آمدن سے زائد اثاثوں اور آف شور کمپنی سے متعلق تحقیقات میں نیب کے طلب کرنے پر علیم خان ایک مرتبہ پھر نیب لاہور کے آفس میں پیش ہوئے تھے۔نیب آفس میں پیشی کے موقع پر ان سے 2 گھنٹے سے زائد تفتیش کی گئی۔نیب نے 18 سوالات کیے جن میں سے وہ صرف 3کے جوابات دے سکے اور مطمئن کرنے میں ناکام رہے۔ جس کے بعد انہیں گرفتار کرلیاگیا۔نیب ذرائع نے کہا کہ علیم خان کی گرفتاری سے متعلق چیئرمین نیب کو بھی آگاہ کردیا گیا ہے۔علیم خان کو آج لاہور کی احتساب عدالت میں پیش کرکے ریمانڈ کی منظوری لی جائے گی۔نیب میں گرفتاری کے بعد علیم خان کا کہنا تھا کہ مقدمات کا دفاع کروں گا اور بھرپور عدالتی جنگ لڑوں گا، قانونی ٹیم کو تیاری کا پیغام دے دیا ہے۔علاوہ ازیں نیب راولپنڈی نے ایل این جی کیس میں سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کو کل طلب کر لیاہے۔ نیب نے شاہد خاقان عباسی کو جمعہ کی صبح 11 بجے راولپنڈی آفس میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔ دوسری جانب وزیراعظم عمران خان نے وزراء کو ہدایت کی ہے کہ وہ ایسے بیانات سے گریز کریں جو کیس پر اثر انداز ہوں، معاملے کو قانون کے مطابق چلنے دیا جائے۔ ادھر پنجاب کے وزیراطلاعات فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ علیم خان ملزم ہیں نہ مجرم بلکہ نیب نے انہیں تفتیش کے لیے تحویل میں لیا ہے۔ پیپلزپارٹی کے رہنما قمر زمان کائرہ اور ن لیگ کے رہنما محمد زبیر نے علیم خان کی گرفتاری کوپنجاب حکومت کے لیے بڑا دھچکا قرار دیا ہے جب کہ وزیر ریلوے شیخ رشید نے کہا ہے کہ خورشید شاہ سمیت ایک دو پی ٹی آئی کے لوگوں کو بھی نیب میں طلب کیا جاسکتا ہے،30 مارچ سے پہلے بہت کچھ سامنے آجائے گا۔