صومالیہ میں کار بم دھماکا،11 افراد جاں بحق 

215
موغادیشو: مصروف علاقے میں کار بم حملے کے بعد ہر طرف تباہی پھیلی ہوئی ہے‘ لاشوں اور زخمیوں کو منتقل کیا جارہا ہے 
موغادیشو: مصروف علاقے میں کار بم حملے کے بعد ہر طرف تباہی پھیلی ہوئی ہے‘ لاشوں اور زخمیوں کو منتقل کیا جارہا ہے 

موغادیشو (انٹرنیشنل ڈیسک) صومالیہ کے دارالحکومت موغادیشو میں کاربم دھماکے میں 11افراد ہلاک ہوگئے۔ حملہ آور نے دھماکے کے لیے ایک پُرہجوم شاپنگ سینٹر کا انتخاب کیا۔ مقامی پولیس کے مطابق بارود سے بھری گاڑی کی شاپنگ مال کے قریب سرکاری دفاتر کے سامنے کھڑا کیا گیا تھا۔ واقعے میں 10دیگر شدید زخمی بھی ہوئے، جس کے باعث ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔ دھماکے کے باعث علاقے میں بڑے پیمانے پر تباہی پھیل گئی، اور کئی عمارتوں اور گاڑیوں کو نقصان پہنچا۔ دوسری جانب صومالیہ میں دبئی کے بندرگاہی آپریشن کے سربراہ کو فائرنگ کرکے ہلاک کردیا گیا۔ 2حملہ آور مچھیروں کے روپ میں آئے اور انہوں نے پال انتھونی فارموسا کا قتل کردیا۔ دبئی حکومت کی ملکیت بندرگاہوں کے انتظام کی ذمے دار کمپنی پورٹس اینڈ آپریشنز ( پی اینڈ او) کے سربراہ کو صومالیہ کے خود مختار علاقے پنٹ لینڈ میں نشانہ بنایا گیا۔ پنٹ لینڈ کے علاقے بری کے گورنر یوسف محمد نے صحافیوں کو بتایا کہ مچھیروں کا روپ دھارے2 مسلح افراد نے پال انتھونی فارموسا کو پیر کی صبح گولی ماری۔ اس وقت وہ بوساسو کی بندرگاہ کی جانب جارہے تھے۔ انہوں نے مزید بتایا ہے کہ پی اینڈ او کے سربراہ کو بوساسو کی بندرگاہ پر واقع مچھلی مارکیٹ میں حملہ آوروں نے سر میں کئی گولیاں ماریں۔ دونوں حملہ آور پستولوں سے مسلح تھے۔ پال انتھونی فارموسا کو شدید زخمی حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا تھا جہاں وہ اپنے زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسے ہیں۔ ایک حملہ آور کو سیکورٹی فورسز نے موقع پر ہی گولی مار کر ہلاک کردیا ہے اور ایک کو زندہ حالت میں گرفتار کر لیا۔ دونوں حملوں کی ذمے داری الشباب نے قبول کی ہے۔ ادھر امریکی فوج نے صومالیہ میں ایک فضائی حملے میں الشباب کے 13 جنگجوؤں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔