آئی ایم ایف سے امداد پاکستانی معیشت کے لیے عارضی علاج ہے

169
کراچی : بین الاقوامی مالیاتی فنڈ سے دوبارہ امداد کے لئے پاکستان کا فیصلہ ایک عارضی علاج ہے جو معیشت اور صارفین کو ایک سہارہ دینے کے لئے ہے، تاکہ درآمدی مال کی ترسیل کی روک تھام ہو کیونکہ وہ چیزیں مقامی طور پر بھی پیدا کی جاسکتی ہیں،پاکستانی روپے کی قدر کا گرنا اس بات کی غمازی ہے
قرضوں کی وجہ سے اس ملک کی معیشت نقصان میں ہے انہوں نے تجویز پیش کی کہ نئے NFC ایوارڈ میں صوبوں کا حصہ تقریباً 50 فی صد کیا جانا چاہئے۔ان خیالات کا اظہار سندھ کے سابق گورنر اور بینظیر بھٹوحکومت کے صوبائی وزیر خزانہ و سابق سینیٹر کمال اظفر نے سابق وزیر خزانہ، ڈاکٹر حفیظ پاشا اور پاکستان اسٹیٹ بینک کی سابق گورنر ڈاکٹر شمشاد اختر کے بیانات پر تبصرہ کرتے ہوئے کیا ۔ سابق سینٹرکما ل اظفر نے کہا کہ سب کو معلوم ہے
ادائیگیوں اور آمدنی کے توازن کے جڑواں خسارے 18 ویں ترمیم 2010ء اور 7 ویں این ایف سی ایوارڈ کی وجہ سے تھے جو تین سال قبل ختم ہوگئے ہیں۔ انہوں نے صوبائی حصص کے محصول کو 57.5 میں تقسیم کیا
وفاقی حصص میں تقسیم شدہ پول میں 42.5 فیصد کمی کی تھی۔ تنقید یہ ہے کہ2018-19 ء کے لئے پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پلان میں کمی کی گئی ہے جبکہ بھاشاڈیم اور مہمند ڈیموں کی تعمیر شروع کرنے کے لئے ملک کو اعلی ترقیاتی بجٹ کی ضرورت ہے ساتھ ہی مستقبل میں زیادہ سے زیادہ ڈیموں کی ضرورت ہے،کیونکہ پاکستان میں پانی اسٹوریج کی صلاحیت خطرناک طور پر کم ہے۔کمال اظفرنے بتایا کہ 2590.1 ٹریلین ٹیکس کے صوبائی حصص میں منتقلی کے بعد اور 7 ویں این ایف سی ایوارڈ کے ذریعہ سرکلر قرض اور عوامی شعبے کے نقصانات کے بہاؤ میں اضافے کی وجہ سے،
وفاقی حکومت توڑ دی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ اس کا حل پبلک ۔پرائیویٹ شعبے کی شراکت داری میں ہے، 50 فیصد حصص اور مینجمنٹ نجی سیکٹر کمپنیوں کو دے دیئے جائیں ، ورنہ اسٹیل ملز کی طرح نجکاری کمیشن کی خدمات کو استعمال کرنے کی کوئی بھی کوشش رائیگاں جائے گی۔انہوں نے کہا کہ گردشی قرض کی حامل اورعدم کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی ڈسکو کے لئے کنٹرول لازمی ہے، جس میں پچاس فیصد ملکیت اور عوامی شعبے کے کاروباری انتظامات کو منتقل کیا جائے اور وفاقی حکومت کا حصہ زیادہ تر این ایف سی ایوارڈ کے تحت تقسیم شدہ کم از کم 50 فیصد تک ہو۔
Print Friendly, PDF & Email
حصہ
mm
قاضی جاوید سینئر کامرس ریپورٹر اور کامرس تجزیہ، تفتیشی، اور تجارتی و صنعتی،معاشی تبصرہ نگار کی حیثیت سے کام کرنے کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں ۔جسارت کے علاوہ نوائے وقت میں ایوان وقت ،اور ایوان کامرس بھی کرتے رہے ہیں ۔ تکبیر،چینل5اور جرءات کراچی میں بھی کامرس رپورٹر اور ریڈیو پاکستان کراچی سے بھی تجارتی،صنعتی اور معاشی تجزیہ کر تے ہیں qazijavaid61@gmail.com

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.