مطالبات تسلیم نہکیے توملک بھر میں پیٹرول کی سپلائی بند کردیں گے

47

اسلام آباد(پانانیوز) آل پاکستان آئل ٹینکرز ایسوسی ایشن کے چیئر مین میر محمد یوسف شاھوانی نے کہا ہے کہ اگر موجود ہ حکومت نے 10دنوں کے اندر ہمارے مطالبات تسلیم نہ کیے توملک بھر میں پیٹرول کی سپلائی بند کردیں گے، جس کی تمام تر ذمے داری موجودہ حکومت اور متعلقہ اداروں پر عائد ہوگی۔ جمعہ کو نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے آل پاکستان آئل ٹینکرز ایسوسی ایشن کے چیئر مین نے کہا کہ ماضی کی حکومتوں کی طر ح موجودہ حکومت نے بھی دشمن معاش پالیسیاں مرتب کرنا شروع کی۔ ہمیں بتایا گیا کہ این ایچ اے اور اوگر ا کے سٹینڈرڈ کے مطابق ہارس پاور کی گاڑیاں تیار کریں۔ جبکہ ملک میں ہارس پاور کی گاڑیوں کے لیے اسٹینڈرڈ کی سٹرکیں موجود نہیں، کہا کہ آئل ٹینکرز کے اونرز کی مشاورت کے بغیر بند کمروں میں پالیسیاں بنائی گئیں۔ان فیصلوں اور پالیسوں سے موجودہ حکومت کے لیے مستقبل میں مسائل پیدا ہوں گے۔تحریک انصاف کی حکومت مسائل کو حل کرنے کے لیے سنجیدگی ظاہر نہیں کررہی ہے،سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے پیٹرولیم نے آئل ٹینکرز کی ترقی یا ریلیف دینے کے لیے کوئی خاص حکمت عملی نہیں دی۔ آئل ٹینکرز کی معاشی قتل عام کا یہ فیصلہ موجودہ وزیر پیٹرولیم کی مشاورت سے کیا گیاہے۔اس فیصلے کے مطابق پی ایس او کمپنی نے9اکتوبر کو ایک سرکلر نمبر 183کے ذریعے پی سی او آئل ٹینکرز کو مکمل طور پر کیلبریٹ ہونے سے روک دیا۔میر یوسف شوخوانی نے مزید کہا کہ اوگر انے ہم پر اپنی پالیسی مسلط کرنے کی کوشش کی۔ ہماری چلتی گاڑیوں کو بند کرنے کے لیے قانون بنایا۔ این ایچ اے نے ہمارے آئل ٹینکرز کے لیے کوہاٹ ٹنل بند کردیا۔دو سالوں میں کئی آئل ٹینکرز حادثے کا شکار ہوئے جن میں ڈرائیوروں کے اموات بھی واقع ہوئیں۔مگر حکمران بے خبر رہے، آج تک کوہاٹ ٹنل آئل ٹینکرز کے علاوہ باقی تمام ٹرانسپورٹ کیلیے کھلا ہے جو کہ سراسر نا انصافی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.