بنیادی انسانی حقوق کا تحفظ انسانی وقار کے مطابق ہونا چاہیے

45

نوابشاہ (نمائندہ جسارت) انٹرنیشنل گرلز اینڈ چائلڈ ڈے کے حوالے سے گورنمنٹ گرلز ہائی اسکول نوشہروفیروز میں ایک سیمینار منعقد ہوا۔ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے ویمن پروٹیکشن آفیسر نوشہرو فیروز فار ویمن ڈیولپمنٹ ڈیپارٹمنٹ میڈم زیب النساء نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بنیادی انسانی حقوق کا تحفظ انسانی وقار کے مطابق ہونا چاہیے، لڑکیوں کے بنیادی حقوق کا تحفظ ممکن ہو تو وہ معاشرے میں ایک قابل عزت بہن، باوفا بیوی اور قابل افتخار ماں بن کر آنے والی نسلوں کیلیے مشعل راہ بنتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ لڑکیوں اور چھوٹے بچوں کی نگہداشت کے ساتھ ساتھ ان کی اخلاقی تربیت اور معاشرے میں کامیاب زندگی گزارنے کے طور طریقوں کی تقلید کیلیے ماحول مہیا کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ قبل ازیں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر نوشہرو فیروز تشفین عالم نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ لڑکیوں کی تعلیم سے زیادہ معاشرے میں لڑکوں کی تعلیم کو اہمیت دی جاتی ہے، حالانکہ مساوی حقوق کا عمل یہ ہونا چاہیے کہ والدین بغیر کسی امتیاز کے لڑکوں اور لڑکیوں کو برابری کی بنیاد پر تعلیم کے زیور سے آراستہ کریں۔ میڈم زیب النساء نے مزید کہا کہ بین الاقوامی معیارات اور مہذب معاشرے میں سر اٹھا کر جینے کیلیے نئی نسل کو تخلیقی عمل کی طرف راغب کرنے کی ضرورت ہے نہ کہ انہیں وٹہ سٹہ، غیرمتوازن شادیوں کے غیر قانونی بندھن میں جکڑ کر ان کے انسانی تشخص کو مسخ کردیا جائے۔ ڈپٹی ڈائریکٹر سوشل ویلفیئر آفیسر سید علی احمد شاہ نے کہا کہ تنگ نظر معاشرے کا یہ المیہ رہا ہے کہ وہ نسل نو کی مثبت عوامل میں حوصلہ افزائی کے بجائے ان کے ساتھ غیر قانونی اور غیر اخلاقی رویہ اپنایا جاتا ہے، جس سے نسل درنسل بگاڑ کی سی کیفیت پیدا ہوتی ہے۔ اس موقع پر طالبات نے اپنے اپنے تجربات اور مشاہدات کا اظہار کیا اور کہا کہ اس طرح کے آگاہی پروگراموں سے بالخصوص ایسے والدین کو بھی مستفیض کرنے کی ضرورت ہے جو معاشرتی ناقدری کے ماحول میں جکڑے ہوئے ہیں جس پر میڈم زیب النسا نے کہا کہ ویمن ڈیولپمنٹ ڈیپارٹمنٹ بیشتر آگاہی پروگراموں کے ذریعے غیرقانونی رجحانات کی حوصلہ شکنی کرنے میں کامیابی حاصل کرچکا ہے۔ اس موقع پر پرنسپل مسز امانت میمن اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ