امریکی ٹیکس بڑھنے کے باوجود چین کی تجارت میں اضافہ

45

بیجنگ (انٹرنیشنل ڈیسک) چینی مصنوعات پر امریکی ٹیکسوں میں اضافے کے باوجود ستمبر کے دوران چین کی برآمدات میں ساڑھے 14 فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ چینی محکمہ کسٹم کے اعداد شمار کے مطابق گزشتہ برس اسی عرصے کے دوران چین کو برآمدات کی مد 195 ارب امریکی ڈالر حاصل ہوئے تھے جب کہ گزشتہ ماہ یہی حجم تقریباً 227 ارب امریکی ڈالر رہا ہے۔ ستمبر کے دوران چین اورامریکا کے درمیان بھی تجارت میں اضافہ ہوا ہے۔ ٹرمپ انتظامیہ گزشتہ ماہ امریکا درآمد کی جانے والی 200 ارب ڈالر کی چینی مصنوعات پر اضافی محصولات عائد کر چکی ہے۔ دوسری جانب انڈونیشیا کے صدر جوکو ویدودو نے کہا ہے کہ چین اور امریکا کے درمیان جاری تجارتی جنگ تباہ کن ہے۔ انہوں نے یہ بات انڈونیشی جزیرے بالی میں انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ، ورلڈ بینک، ابھرتی اقتصادیات کے ممالک کی تنظیم جی ٹوئنٹی کے مرکزی بینکوں اور دوسرے بین الاقوامی مالیاتی اداروں کے سالانہ مشترکہ اجلاس کے آغاز پر کہی۔ ویدودو کے مطابق بڑی اقتصادیات کے حامل ممالک کے مابین عدم تعاون شدید منفی اثرات کا حامل ہو گا اور اس سے عالمی منڈیوں میں افراتفری پھیل سکتی ہے۔ ان کے بقول تجارتی جنگ سے کئی ممالک کے سالانہ پیداواری عمل میں گراوٹ پیدا ہونے کا قوی امکان ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ