کے سی سی آئی کا ’’ نیا پاکستان ہاؤسنگ پروگرام‘‘ کا خیرمقدم

74

کراچی چیمبر آف اینڈ انڈسٹری ( کے سی سی آئی ) کے صدر جنید اسماعیل ماکڈا نے وزیراعظم عمران خان کی جانب سے اعلان کردہ ’’ نیا پاکستان ہاؤسنگ پروگرام‘‘ اور ’’ کلین وگرین پاکستان‘‘ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ کراچی کی تاجر وصنعتکاربرادری ان اقدامات کا تہہ دل سے خیرمقدم کرتی ہے اور ہم ان پروگرامز کو کامیاب بنانے کے لیے حکومت کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کھڑے ہیں جو ملک کے وسیع ترمفاد میں ہیں ۔ ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ اگلے 5سالوں میں50لاکھ گھروں کی تعمیر ایک مشکل کام ضرور ہوگا تاہم حکومت کی نیک نیتی کو مدنظر رکھتے ہوئے اُمید ہے کہ یہ حاصل کر لیا جائے گا جو سستے گھر کی صورت میں نہ صرف عام آدمی حق میں جائے گابلکہ تعمیراتی شعبے اور اس سے منسلک 40 دیگر صنعتوں میں بڑے پیمانے پر سرگرمیوں کو فروغ کی بدولت معیشت کو بھی سپورٹ حاصل ہوگی جبکہ روزگار کے لاکھوں مواقع ماہر اور نیم ماہر افرادی قوت کو میسر آئیں گے۔انہوں نے حکومت سے سندھ میں اور کراچی کے اطراف میں منصفافہ طریقے سے گھروں کی تعمیر کی درخواست کرتے ہوئے کہاکہ حکومت کو چاہیے کہ وہ تعمیراتی اور اس سے منسلک شعبوں کو وسعت دینے کی غرض سے نئے ملکی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ان شعبوں کی جانب راغب کرے جو اسی صورت میں دلچسپی کا مظاہرہ کریں گے جب کاروباری لاگت کم کرکے، پیچیدہ طریقوں کو آسان بناکر، بلند عمارتوں کی تعمیر کے مسئلے کو حل کرکے، مختلف ٹیکسوں اور ضروری خام مال کی قیمتوں میں کمی کرکے سازگار کاروباری ماحول فراہم کیا جائے گا۔انہوں نے’ کلین وگرین پاکستان‘‘ مہم کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ کے سی سی آئی اس اقدام کو سراہتے ہوئے اس کی مکمل حمایت کرے گی جس میں کراچی جوملک کاسب بڑا اور زیادہ آبادی والا شہر ہے اس پر خصوصی توجہ د ی جائے جس کا وعدہ عمران خان نے کراچی چیمبر سے 22جولائی کو عام انتخابات سے چند روز قبل ہی کیا تھا۔ سوا دوکروڑ کی آبادی کے ساتھ یہ شہر3500اسکوائر کلو میٹرز تک پھیلا ہوا ہے لہذا کراچی کو نہ صرف گندگی کے سنگین مسائل کا سامنا ہے بلکہ تجاوازت کی بھرمار بھی ایک اہم مسئلہ ہے جواس شہر کے بارے میں منفی تاثر دیتا ہے۔شہربھرمیں تقریباً تمام ہی علاقے خاص طور پر اولڈ سٹی ایریا حتیٰ کہ کے سی سی آئی کی عمارت کے اطراف بھی تجاوازت کی بھرمار ہے جو ہر وقت ٹریفک کے مختلف مسائل اور مشکلات کا باعث ہوتے ہیں خصوصاًاس وقت جب اہم شخصیات کے سی سی آئی کے دورے پر آتی ہیں
۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ