مصر: چرچ حملوں میں ملوث  17 مجرموں کو موت کی سزا

41

قاہرہ (انٹرنیشنل ڈیسک) مصر میں ایک فوجداری عدالت نے چرچ حملوں میں ملوث 17افراد کو موت کی سزا سنادی۔ عدالت نے دیگر 19افراد کو عمر قید اور 10 ملزمان کو 10سے 15برس قید کی سزا سنائی۔ اس سے قبل اپریل میں بھی 36افراد کو سزائے موت سنائی گئی تھی۔ 2016ء اور 2017ء میں 3چرچوں اور پولیس کی چوکی پر ہونے والے حملوں میں 80افراد مارے گئے تھے۔ یہ حملے مصر کے بڑے شہروں قاہرہ، اسکندریہ اور طنطا می کیے گئے تھے۔
2017ء کے خودکش حملے میں 45افراد ہلاک ہوئے تھے،جس کی ذمے داری دہشت گرد تنظیم داعش نے قبول کرلی تھی۔ 11دسمبر 2016ء میں قاہرہ میں سینٹ پیٹر اور سینٹ پاؤل چرچ پر حملوں میں 29افراد نشانہ بنے تھے۔ یہ حملے صرف عیسائیوں تک محددو نہ تھے، بلکہ گزشتہ برس نومبر میں مساجد پر بھی حملے کیے تھے، جن میں 300مسلمان شہید ہوئے۔ دہشت گردوں کی سرکوبی کے لیے مصری فوج نے سینا میں آپریشن جاری رکھا ہوا، جس میں جنگجوؤں کے خلاف اسے خاطر خواہ کامیابی حاصل ہوئی ہے۔
مصر/چرچ حملے

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.