نظام تعلیم مین اصلاحات لا رہے ہیں ، وزیراعلیٰ پختونخوا

67

پشاور (آن لائن) وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے صوبے میں موجود مختلف نوعیت کے وسائل کے مفید استعمال اور تیز رفتار ترقی کے لیے مالی بنیادمضبوط کرنے کے حکومتی عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صوبے کے نظام تعلیم میں اصلاحات لارہے ہیں،اس حوالے سے سسٹم کی کمزوریوں سے آگاہ ہیں اور ان پر قابو پانے کے لیے منصوبہ بندی کرلی ہے، معیار پر کوئی سمجھوتا نہیں کریں گے۔ ان خیالات کا اظہار اُنہوں نے پاکستان میں منشیات اور جرائم کے خلاف اقوام متحدہ کے نیشنل گڈوِل سفیر شہزاد رائے سے وزیراعلیٰ ہاؤس پشاور میں گفتگو کرتے ہوئے کیا، شہزاد رائے نے خیبرپختونخو ا کے تعلیمی اداروں میں نشہ آور اشیا کے استعمال کے تدارک ، ابتدائی تعلیمی اداروں میں مادری زبان میں درس و تدریس کے تعارف اور سیاحت سے متعلقہ سرگرمیوں کے فروغ کے حوالے سے جدید نظریات سے آگاہ کیا ۔ محمود خان نے صوبے میں معیاری تعلیم کے لیے ترقی یافتہ اقوام کے آزمودہ خطوط پر کام کرنے کا یقین دلایا ۔ اُنہوں نے کہا کہ تعلیمی
اصلاحات کے سلسلے میں ہمارے مجموعی اقدامات میں معیار ہی واحد پیمانہ ہو گاجس پر ہم کوئی سمجھوتا نہیں کریں گے ۔ حکومت نظام تعلیم کی ہمہ گیر اصلاح کے لیے ٹھوس ربط پیدا کرے گی تاکہ یہ بین الاقوامی معیار کے کسی بھی تعلیمی نظام کا مقابلہ کر سکے۔ اس سلسلے میں ہر سطح پر حکومت کے اقدامات نظر آئیں گے۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ اسکولوں میں بچوں کے داخلے کی مہم کی بھر پور کامیابی کے لیے بھی انتہائی سنجیدہ ہیں۔ ہم نظام تعلیم میں اصلاحات کی راہ میں حائل رکاوٹوں سے بھی آگاہ ہیں مگر اس کے باوجود ہم جدت پر مبنی اقدامات کے ذریعے تعلیمی نظام کی بہتری کا پختہ عزم کر چکے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے یقین دلایا کہ اُن کی حکومت صوبے میں دیر پا اقتصادی ترقی کے لیے پر عزم ہے۔ سیاحت ، توانائی اور معدنی ذخائر صوبے کی مستقبل کی معیشت میں استحکام کا اہم ذریعہ ہوں گے ۔ اُن کی حکومت سرمایہ کاروں کو نہ صرف خوش آمدید کہے گی بلکہ اُنہیں سہولت بھی فراہم کرے گی اور اُنہیں سرمائے کی واپسی کی ضمانت بھی دے گی ۔ اُنہوں نے کہاکہ حکومت نہ صرف تعلیمی اداروں میں منشیات کی حوصلہ شکنی کے لیے اقدامات کرے گی بلکہ اس رجحان کو پورے معاشرے سے ختم کرنے کے لیے بھی موثر اقدامات اُٹھائے گی اس کے لیے قانون سازی بھی کریں گے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ