ملک میں امیر اور غریب کیلیے الگ قانون، کرپٹ نظام کی نشانی ہے

20

ٹنڈوالٰہیار(نمائندہ جسارت) عوامی نیشنل پارٹی کے ضلعی صدر میر باز خان عرف باچا خان نے نیشنل پریس کلب پر پریس کانفرنس کرتے ہائے کہا کہ ملک میں امیر اور غریب کیلیے الگ الگ قانون ہیں یہ کرپٹ نظام کی نشانی ہے نئے پاکستان میں بھی پرانا قانون چل رہا ہے پہلے کی قومیں اللہ نے اسی لیے تباہ کیں کیونکہ وہاں بھی امیر اور غریب کیلیے الگ الگ قانون تھے ملک بھر کی جیلوں میں لاکھوں غریب مجرم قید ہیں ان کیلیے بھی اسی طرح وی آئی پی علاج معالجے اور اموات پر انسانی ہمدردی کی بنیاد وں پر ان کو بھی ریلیف ملنا چاہیے بحیثیت انسان تمام انسان یکساں ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ٹنڈوالٰہیار سمیت پورے ملک میں بلڈر مافیاکی جانب سے بنائی جانے والی غیر قانونی ہاؤسنگ اسکیموں کے بلڈر ز کے خلاف قانونی کارروائی کر کے عوام کو بنیادی سہولیات کی فراہمی کو یقنی بنایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ ملک سے کر پشن کا خاتمے کو یقینی بنایا جائے ، چیف جسٹس آف پاکستا ن کی جانب سے ملک کی عوام کے مفادات کو مد نظر رکھتے ہوئے جو ڈیم بنانے کا اعلان کیااہے وہ ایک محب وطن ہی کر سکتا ہے ماضی کے حکمران اپنے دور اقتدار میں ملک میں ڈیم تعمیر کرتے تو ملک میں مسائل پیدا نہیں ہوتے۔ انہوں نے ڈیم کی تعمیر کے لیے ڈیم فنڈ میں دس ہزار روپے دینے کا اعلان بھی کیا۔ ملک کی تعمیر و تر قی کے لیے ہماری پارٹی کے کارکنان ہمہ وقت تیار ہیں اور اپنے ملک کے دفاع کے لیے افواج پاکستان کے ساتھ مل کر دفاع کر یں گے اور اس مقصد کی خاطر اگر جان کا نذرانہ دیناپڑا تو کیسی بھی قر بانی سے بھی دریغ نہیں کریں گے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.