فیس میں 15فیصد تک اضافے کی اجازت دی جائے،آل پرائیویٹ اسکولز

55

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) آل پرائیویٹ اسکولز مینجمنٹ ایسوسی ایشن نے اسکول فیسوں میں اضافے سے متعلق معزز عدلیہ کے فیصلے کا احترام کرتے ہوئے اسکولز کی فیس میں صرف 5 فیصد اضافے کی اجازت پر تحفظات کا اظہار بھی کیا ہے ۔ آل پرائیویٹ اسکولز مینجمنٹ ایسوسی ایشن نے کہا کہ اسکولوں کو10سے15فیصد فیسوں میں اضافے کی اجازت دی جانی چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ ٹیچرز کی تنخواہ، اسکول بلڈنگ کے رینٹ میں سالانہ تقریباً10 سے 15 فیصد اضافہ ہوتا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ بجلی کے بحران کی وجہ سے جنریٹر اور اسکے فیول کے سالانہ اخراجات ، پانی کا کمرشل بل اور پانی نہ آنے کی وجہ سے پانی کے ٹینکر کے اخراجات، ملک کے بدلتے ہوئے امن و امان کے حالات کی وجہ سے اسکول کی سیکورٹی جو کہ سرکاری اداروں کی ذمے داری ہے، وہ بھی اسکول پر ڈال دی گئی ہے جس کا اضافی بوجھ بھی اسکول کو ادا کرنا ہوتا ہے۔ آل پرائیویٹ اسکولز مینجمنٹ ایسوسی ایشن کے چیئرمین سید طارق شاہ نے کہا کہ گورنمنٹ کی طرف سے کوئی گرانٹ یا کوئی مالی مدد نہیں کی جاتی بلکہ ہر طرح کمرشل ٹیکسز کا اضافی بوجھ بھی اسکولز پر ڈال دیا
گیا ہے۔ جس کی وجہ سے اسکولز کے لیے معیاری تعلیم مہیا کرنا ایک مہنگا کام ہے۔ ان حالات میں مناسب فیس چارج کرنے والے اسکولزکو چلانا اور معیاری تعلیم مہیا کرنا بے حدمشکل ہو جائے گا۔
پرائیویٹ اسکولز

Print Friendly, PDF & Email
حصہ